عالم یوم ذیابیطس

 سرینگر //کشمیر صوبے میں ذیابیطس کی بیماری تیزی سے بڑھ رہی ہے اور پچھلے پانچ سال کے دوران ذیابیطس کی شرح 7.25تک پہنچ گئی ہے ۔ محکمہ صحت کی جانب سے 5سال سے جاری سکرینگ عمل کے دوران 9لاکھ افراد میں شوگر بیماری کا پتہ لگانے کیلئے تشخیصی ٹیسٹ عمل میں لائے گئے جن میں 70ہزار افراد میں شوگر مریضوں کی تصدیق ہوگئی۔ منگل کو عالمی یوم ذیابیطس کے موقعہ پر وادی کے مختلف اضلاع میں منعقد کئے گئے کیمپوں میں8ہزار افراد کی سکرینگ کی گئی جن میں 570نئے شوگر مریضوں کا پتہ چلا ہے۔ پوری دنیا کے ساتھ ساتھ وادی میں بھی منگل کو عالمی یوم ذیابیطس کے موقعہ پر سکرینگ کیمپوں کا انعقاد کیا گیا ۔ وادی کے مختلف اضلاع میں منعقد کئے گئے کیمپوں میں 14نومبر کو 8ہزار افراد کی سکرینگ کی گئی جبکہ سکرینگ کا سب سے بڑا کیمپ لال چوک کے گھنٹہ گھر کے نزدیک منعقد ہوا جس میں 1230مریضوں کی تشخیصکی گئی جن میں 76نئے شوگر مریضوں کا پتہ چلا ۔ تفصیلات فراہم کرتے ہوئے سی ایم او سرینگر ڈاکٹر دلدار احمد میر نے بتایا کہ عالمی یوم ذیابیطس کے موقعہ پر امسال کا موضوع  ’’ خواتین اور ذیابیطیس ‘‘ تھا اور وادی میں نئے مریضوں کا پتہ لگانے کیلئے لال چوک میں یہ سکرینگ کیمپ منعقد کیا گیا ۔دلدار احمد نے بتایا کہ کیمپ میں 1230مریضوں کی سکرینگ کی گئی جن میں سے 76افراد میں شوگر بیماری ہونے کی تصدیق ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سکرینگ کیمپ کے دوران جن مریضوں میں شوگر کی تصدیق ہوئی ہے ان مریضوں کو مزید تشخیصی ٹیسٹوں کی ضرورت ہے۔ وادی میں ذیابیطس کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے محکمہ صحت کے ڈپٹی ڈائریکٹر (سکمز) ڈاکٹر شوکت احمد لولو نے کہا ’’ سال 2012سے لیکر  2017تک 9لاکھ لوگوں کی تشخیص ہوئی جن میں 70ہزار افراد میں ذیابیطس کی بیماری کی تصدیق ہوئی ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ رہن سہن میں تبدیلی، رائس کوکراور کم محنت والے کام کرنے کی وجہ سے لوگوں میں ذیابیطس کی بیماری بڑھ رہی ہے۔ ڈاکٹر شوکت احمد لولو نے کہا کہ اپریل 2017سے لیکر اکتو بر 2017تک منعقد کئے گئے کیمپوں کے دوران 1لاکھ 31ہزار افراد کی سکرینگ کی گئی اور 9ماہ کے دوران 9ہزار 832افراد کے شوگر کی بیماری میں مبتلا ہونے کا انکشاف ہوا ،  اسطرح  2017کے 9ماہ کے دوران وادی میں شوگر بیماری کی شرح 7.10فیصد رہی ۔ ڈاکٹر شوکت احمد نے کہا کہ منگل کو عالمی یوم ذیابیطس کے موقعہ پر وادی کے مختلف اضلاع میں منعقد کئے گئے کیمپوں کے دوران 8ہزار افراد کی سکرینگ کی کئی جن میں 570افراد کے شوگر بیماری میں مبتلا ہونے کی تصدیق ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ منگل کو سکرین کئے گئے مریضوں میں سب سے زیادہ شوگر مریض کپوارہ میں پائے گئے جہاں 1114افراد میں سے 130افراد میں شوگر کی بیماری کی تصدیق ہوئی ۔ شوکت احمد لولو نے کہا کہ مریضوں کی سب سے کم شرح ضلع گاندربل میں رہی جہاں کیمپوں کے دوران 302افراد کے شوگر ٹیسٹ کئے گئے جن میں صرف 4افراد میں شوگر بیماری کی ابتدائی تصدیق ہوئی ۔