عالمی تپش کے رجحان ۔2022پانچواں گرم ترین سال رہا:ناسا

لاس اینجلس// یو ایس نیشنل ایروناٹکس اینڈ اسپیس ایڈمنسٹریشن (ناسا) کے جاری کردہ تجزیے کے مطابق 2022 میں زمین کی سطح کا اوسط درجہ حرارت 2015 کے ساتھ پانچواں گرم ترین سال درج ہوا۔ناسا کے گوڈارڈ انسٹی ٹیوٹ فار اسپیس اسٹڈیز (جی آئی ایس ایس) کے سائنس دانوں نے جمعرات کو بتایا کہ زمین کی طویل مدتی گرمی کے رجحان کو جاری رکھتے ہوئئ 2022 میں عالمی درجہ حرارت ناسا کے بیس لائن پیریڈ (1951-1980) کی اوسط سے 1.6ڈگری فورن ہائٹ (0.89 ڈگری سیلسیس) زیادہ تھا۔ناسا کے ایڈمنسٹریٹر بل نیلسن نے کہا کہ گرمی کا یہ رجحان خطرناک ہے ۔ “ہماری گرمی کی آب و ہوا پہلے ہی نشان بنا رہی ہے :جنگل کی آگ شدت اختیار کر رہی ہے ۔ طوفان مضبوط ہو رہے ہیں؛ خشک سالی تباہی مچا رہی ہے اور سمندر کی سطح بڑھ رہی ہے ۔ انہوں نے کہا، “ناسا موسمیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے میں اپنا کردار ادا کرنے کے ہمارے عزم کو مزید گہرا کر رہا ہے ۔ ہمارا ارھ سسٹم آبزرویٹری ہمارے موسمیاتی ماڈلنگ، تجزیہ اور پیشین گوئیوں کی مدد کے لیے جدید ترین ڈیٹا فراہم کرے گا تاکہ انسانیت کو ہمارے سیارے کی بدلتی ہوئی آب و ہوا سے نمٹنے میں مدد ملے ۔’’ ناسا کے مطابق 1880 میں جدید ریکارڈ رکھنے کے آغاز کے بعد سے گزشتہ نو سال سب سے زیادہ گرم سال رہے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ 2022 میں زمین 19ویں صدی کے آخر میں اوسط سے تقریباً 2 ڈگری فارن ہائیٹ (تقریباً 1.11 ڈگری سیلسیس) گرم تھی۔