عالمی ادارہ صحت کی سکولوں میں کورونا ٹیسٹ کروانے کی تجویز

نیویارک //عالمی ادارہ صحت نے اسکولوں میں کورونا ٹیسٹ کروانے کی تجویز دیتے ہوئے کہا ہے کہ ریموٹ ایجوکیشن کے نقصان دہ اثرات سے بچنے کے لیے اسکولوں میں کورونا کے ٹیسٹ ہونے چاہییں۔اس سے قبل اسکولوں میں صرف اس وقت اسکریننگ کی ہدایات تھیں جب وہاں کورونا کے کیسز ظاہر ہوں تاہم اب عالمی ادارہ صحت کا ماننا ہے کہ اسکولوں میں اسٹاف اور بچوں میں علامات نہ ہونے پر بھی وہاں کورونا کے پی سی آر  ٹیسٹ یا  ریپڈ اینٹی جن ٹیسٹ کیے جانے چاہییں۔عالمی ادارہ صحت کے علاقائی ڈائریکٹر  برائے یورپ ہنس کلوج کا یونیسف اور یونیسکو کے ہمراہ جاری کردہ بیان میں کہنا تھا کہ موسم گرما کے مہینوں کی وجہ سے حکومتوں کے پاس موقع ہے کہ وہ صحیح اقدامات اٹھائیں تاکہ انفیکشن کی شرح میں کمی اآسکے اور اسکولوں کی بندش ختم ہوسکے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ اسکولز کی بندش کی وجہ سے بچوں اور نوجوانوں کی تعلیم کا بہت نقصان ہوا اور وہ ذہنی دباؤ کا بھی شکار ہوئے۔ہنس کلوج کے مطابق ہم عالمی وبا کو اجازت نہیں دے سکتے کہ وہ ہمارے بچوں کی تعلیم و ترقی میں رکاوٹ کا باعث بنے۔ادھر برطانیہ میں اسکول کے طلبہ نے دعویٰ کیا ہے کہ کینو کا جوس کورونا ٹیسٹ کیلئے استعمال ہونے والی کِٹ پر ڈالنے سے نتیجہ مثبت آجاتا ہے۔طلبہ کے مطابق مالٹے کا جوس اگر ’کووڈ لیٹرل فلو ٹیسٹ‘ میں استعمال ہونے والی کِٹ میں سیمپل کی جگہ پر ڈالا جائے تو کچھ منٹوں میں کٹ پر مثبت نتیجہ ظاہر ہوجاتا ہے۔واضح رہے کہ ’کووڈ لیٹرل فلو ٹیسٹ‘ سے مراد ان لوگوں کا ٹیسٹ ہے جن لوگوں میں کورونا کی کوئی علامات ظاہر نہیں ہوتیں اور وہ چھوٹی سی کٹ کی مدد سے گھر پر ہی اپنا ٹیسٹ کرتے ہیں، یہ کِٹ حمل کا پتہ لگانے کیلئے ہونے والی اسٹرپ کی طرح ہی ہوتی ہے۔
 

سعودی عرب کی3 ممالک پرسفری پابندی

جدہ//سعودی عرب نے متحدہ عرب امارات سمیت 3 ممالک پر سفری پابندیوں کا اعلان کر دیا۔ سعودی وزارت داخلہ نے سعودی شہریوں کی پیشگی اجازت کے بغیر براہ راست یا بالواسطہ متحدہ عرب امارات کے سفر پر پابندی عائد کر دی۔پابندی والے دیگر ممالک میں ایتھوپیا اور ویتنام بھی شامل ہیں۔اس حوالے سے سعودی وزارت داخلہ نے نئی سفری گائیڈلائنز جاری کی ہیں جس کے مطابق 4 جولائی رات 11 بجے سے پابندی والے ممالک سے آنے اور جانے والی پروازیں معطل کر دی جائیں گی۔اس پابندی کے بعد تینوں ممالک سے آنے والے تمام مسافر بشمول سعودی شہریوں کو قرنطینہ کرنا پڑے گا تاہم وہ شہری جو 4 جولائی رات 11 بجے سے قبل مملکت پہنچیں گے انہیں قرنطینہ نہیں کرنا پڑے گا۔