طلاب میں سائنسی مزاج کا رجحان

 سرینگر//طالب علموں میںسائنسی مزاج کے رحجان کوبڑھاوا دینے کے لئے محکمہ تعلیم ہر طرح کی سہولیت فراہم کرنے کے لئے تیار ہے۔ ان باتوں کا اظہار ناظم تعلیم کشمیر ڈاکٹر جی این ایتو نے این آئی ٹی سرینگر میں ـ’توڑ ،پھوڑ،جوڑ‘‘ عنوان کے تحت سرینگر اور محکمہ تعلیم کے باہمی اشتراک سے منعقدہ مختلف سکولوں کے 30طالب علموں کو تربیت فراہم کرنے سے متعلق افتتاحی تقریب میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے شرکت کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ محکمہ تعلیم عنقریب ہی طالب علموں کے لئے ملک کے مشہور و معروف پیشہ ورانہ ، ٹیکنالوجی اور تعلیمی مراکز کے  exposure visitsکا اہتمام کر رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ مختلف گھریلو آلات کے استعمال اور اُن کی جُزوی مرمت سے متعلق طالب علموں کو تربیت فراہم کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے تاکہ گھروں میں اِن آلات کی جُزوی خرابیوں کو دور کرنے کے لئے ماہرین کی عدم دستیابی کے دوران مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔ ناظم تعلیم نے کہا کہ محکمہ تعلیم نے تعلیمی کیلنڈر میں طالب علموں کو مختلف یونیورسٹیوں ، کالجز اور نیشنل انسٹیچوٹ آف ٹیکنالوجی کے مختلف مراکز کا دورہ کروانے کا پروگرام ترتیب دیا ہے تاکہ ان اداروں کے تربیتی مراکز میں جدید ٹیکنالوجی سے متعلق طلباء کو جانکاری فراہم کرکے اُن کی صلاحیتوں کو نکھارا جاسکے اور وہ اپنے اختراعی نوعیت کے خیالات و تصورات کو ظاہر کرسکیں اور اُن کی تخلیقی ذہنیت کو فروغ دیا جاسکے ۔ ناظم تعلیم نے کہا کہ ہمارے طالب علم خداداد صلاحیتوں کے ساتھ ساتھ انمول تخیل و تصورات اور تخلیقی ذہنیت کے حامل ہیں لیکن اُن کی یہ صلاحیتیں تب ہی رنگ لائیں گی جب اُن کی صلاحیتوں کو نکھارنے کے ساتھ ساتھ اُنہیں معقول پلیٹ فارم فراہم کیا جائے۔ این آئی ٹی میں منعقدہ مختلف سکولوں کے 30طلباء کو اولین مرحلے میں مختلف گھریلو آلات جیسے پنکھے ،واٹر پمپ اور دیگر آلات کی جُزوی مرمت سے متعلق تربیت فراہم کی جارہی ہے جن میں قومی سطح کے ماہر اور تربیت کار وِکاس چاوڑاکی خدمات حاصل کی جارہی ہیںجنہوں نے آج منعقدہ افتتاحی تقریب کے دوران تربیت فراہم کئے جانے سے متعلق اپنی حصول یابیوں کا خلاصہ کیا۔ ڈائریکٹر این آئی ٹی راکیش سہگل نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بچوں میں سائنسی مزاج کو اُبھارنے کے لئے سکولوں کی لیبارٹریاںایک اہم وسیلہ ہے جس کو مکمل طور استعمال کئے جانے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ عنقریب ہی این آئی ٹی کی طرف سے چند منتخب سکولوں کو کمپیوٹر اور یو پی ایس فراہم کئے جانے کے منصوبے کو بھی عملی جامہ پہنایا جائے گا۔