طبی و سفری سہولیات کے وعدے وفا نہ ہوئے پونچھ سے ہجرت کرنے والا خانہ بدوش طبقہ انتظامیہ سے ناراض

حسین محتشم

پونچھ//خطہ پیر پنچال کے دیگر علاقوں کیساتھ ساتھ سرحدی ضلع پونچھ سے گرمیاں شروع ہو تے ہی سینکڑوں کی تعداد میں کنبے اپنے مال مویشیوں کے ہمراہ پہاڑی اور ٹھنڈے علاقوں کی جانب رخ کرتے ہیں تاہم اس طبقہ نے بتایا کہ رواں سیزن کے دوران ضلع انتظامیہ نے ان کو بنیادی سہولیات بالخصوصی طبی اور سفری سہولیات دستیاب کروانے کی یقین دہانیاں کروائی تھی تاہم ان کو ابھی تک مذکورہ سہولیات فراہم نہیں کی گئی ہیں جسکی وجہ سے اپنے مال مویشیوں کے ہمراہ موسمی نقل مکانی کرنے والے گوجر بکروال طبقہ انتظامیہ کے اقدامات سے مطمئن نہیں ہے۔

 

 

یہ محنت کش طبقہ کے افراد جو اپنے مویشی پیر پنجال سے دور دراز ڈھوکوں پر لے جا رہے ہیں انھیں پیدل اپنی منزل تک پہنچنے میں 20 سے 25 دن کا طویل وقت لگتا ہے۔اگرچہ انتظامیہ کی جانب سے نقل مکانی کرنے والوں کو یقین دہانی کرائی گئی تھی کہ اس بار ان کو گاڑیوں کی سہولت فراہم کی جائے گی تاہم طبقہ کے لوگوں کا کہنا ہے کہ اگر ایسا ہوتا تو وہ ایک دن میں اپنی منزل پر پہنچ سکتے ہیںلیکن ان کو یہ سہولت نہیں مل رہی ہے۔انہوں نے الزام لگایا کہ زمینی سطح پر کچھ نہیں ہورہا ہے بلکہ یہ سارا کاغذات میں ہی انجام دیا جا رہا ہے۔نقل مکانی کرنے والے طبقہ جات کا کہنا ہے کہ سفر کے دوران ان کو رہنے کے لئے کوئی پناہ گاہ بھی دستیاب نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ کچھ مقامات پر اگرچہ برسوں پہلے تعمیرات کی بھی گئی تھی وہ اب کھنڈرات میں تبدیل ہو گئی ہیں۔ ان کامزید یہ کہنا تھا کہ ان کے لئے کوئی طبی سہولت بھی دستیاب نہیں ہے۔ ہر سال ان کے کئی مویشی راستے میں مر جاتے تھے۔ انہوں نے انتظامیہ سے اپیل کی کہ انہیں ٹرک فراہم کئے جائیں تاکہ وہ آسانی سے اپنی منزل پر پہنچ سکیں۔