صنعت گھر بمنہ میں شلیندر کمار متعدد نوجوان اختراء کاروں سے ملے

جے اینڈ کے سٹارٹ اپ پالیسی 2018 

سرینگر//پرنسپل سیکریٹری صنعت و حرفت شلیندر کمار نے کہا ہے کہ ریاستی حکومت اختراعیت کے ماحول کو فروغ دینے کیلئے جے اینڈ کے سٹارٹ اپ پالیسی 2018 کے تحت موثر اقدامات کرنے کی وعدہ بند ہے ۔صنعت گھر بمنہ میں وادی کشمیر سے تعلق رکھنے والے دو درجن کے قریب نوجوان اختراع کاروں کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت نے سٹارٹ اپ پالیسی 2018 کے تحت کئی مراعات کا اعلان کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی انتظامی کونسل نے اس ماہ کے اوائیل میں اس پالیسی کو منظوری دی ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سٹارٹ اپس کیلئے ہر ممکن مدد فراہم کرنے کیلئے پُر عزم ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ایک ایسی پالیسی مرتب کرنے کا ارادہ رکھتی ہے جس کی بدولت سٹارٹ اپس کو سٹاف ایکسچینج میں لسٹ ہونے کا موقعہ فراہم ہو گا ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ملک کے بڑے تاجروں کو جموں کشمیر کے سٹارٹ اپس میں سرمایہ کاری کرنے کی طرف راغب کر رہی ہے ۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ ان اقدامات کے جلد ہی موثر نتایج سامنے آئیں گے ۔ شلیندر کمار نے کہا کہ حکومت عالمی سطح کی کنسلٹنسی کی خدمات حاصل کر رہی ہے تا کہ سٹارٹ اپس کے ماحول میں حائل رکاوٹوں کو دور کیا جا سکے ۔ انہوں نے کہا کہ نئی پالیسی کے ذریعے سے سٹارٹ اپس کو رعائتی نرخوں پر دفتر کی جگہ ، ماہانہ الاؤنس جو کہ دس ہزار روپے سے 12 ہزار روپے کا ہو گا ،کے علاوہ 10 سے 12 لاکھ روپے کی یک مشت معاونت دی جائے گی تا ہم اس کیلئے ریاستی ٹاسک فورس کی منظوری لازمی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت ڈائریکٹوریٹ آف انڈسٹریل پالیسی اینڈ پرموشن کے ساتھ جموں وکشمیر کے 58 سٹارٹ اپ رجسٹر ہیں ۔ پرنسپل سیکرٹری نے افسروں کو ہدایت دی کہ وہ مختلف محکموں کے انتظامی سیکرٹریوں کے ساتھ اختراع کاروں کی ایک میٹنگ طلب کریں ۔ انہوں نے کہا کہ انڈسٹریز محکمہ کے ساتھ ماہانہ میٹنگوں کا انعقاد کیا جانا چاہئیے تا کہ باہمی تبادلہ خیال ممکن ہو سکے ۔ میٹنگ میں ڈائریکٹر جے کے ای ڈی آئی ایم آئی پرے اور متعلقہ محکموں کے کئی دیگر اعلیٰ افسران بھی موجود تھے ۔