شیئر مارکیٹ کے نام پر پیسہ اینٹھ کر لٹیرے فرار

مینڈھر//مینڈھر میں شیئر مارکیٹ کے نام پر پیسہ اینٹ کر لٹیروں کے فرار کرجانے کا معاملہ سامنے آیاہے جس پر مقامی لوگوں میں شدید غم وغصہ پایاجارہاہے ۔ذرائع کے مطابق ایک سال قبل چھونگاں علاقہ سے تعلق رکھنے و الے کچھ عناصر نے شیئر مارکیٹ کے نام پر ایک جعلی بینک کھولااور لوگوں سے یہ جھانسہ دے کر پیسے وصول کئے گئے کہ انہیں پانچ دنوں میں دوگنارقم واپس ملے گی ۔اس دوران بڑی تعداد میں سادہ لوح لوگوں نے اپنی محنت کی کمائی میں سے ان لٹیروں کو دی اور جب ان کے پاس کروڑوں روپے جمع ہوگئے توانہوں نے یہ رقم واپس دینے کیلئے حیلے بہانوں کا سہارا لیا ۔اپنی کمائی کھوجانے پر جب لوگوں نے شور وغل مچایا تو وہ مینڈھر سے ہی فرار ہوگئے ۔اس دوران بڑی تعداد میں لوگ دلی اور جموں میں بھی لگاتار چھاپے مار ے اور ان کے رشتہ داروں کے گھروں کے باہر ناکے لگا ئے جارہے ہیں لیکن ان کے بارے میں کچھ پتہ نہیں چل رہا۔مقامی لوگوں کاکہناہے کہ پولیس اور انتظامیہ لٹیروں کا پتہ نہ لگاکر مینڈھر میں حالات خراب کرناچاہتی ہے ۔انہوں نے بتایاکہ سومو ار کوکچھ لوگوں نے جعلی بنک چلانے والے شخص کے ایک رشتہ دار کوکوٹاں کے مقام پرپکڑ لیا اور اس کی گاڑی ضبط کی جس کے بعد پولیس نے بھی مداخلت کی کوشش کی لیکن وہ گاڑی لیکر چلے گئے اور یہ گاڑی انہی کے قبضہ میں ہے ۔رابطہ کرنے پرایس ڈی پی او مینڈھر نے کہاکہ وہ اس معاملے کی تحقیقات کریں گے۔