شہر سرینگر میں سڑکوں کی زبوں حالی سے لوگ پریشان

سرینگر //شہرسرینگرکے کئی علاقوں میں اہم اور اندرونی سڑکوں کی خستہ حالی سے لوگ شدید مشکلات سے دوچار ہیں اور لوگ الزام لگا رہے ہیں کہ شہر سرینگر کو مکمل طور نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ شہر کی اکثر وبیشتر سڑکیں خستہ حال ہیں سڑکوں پر نہ صرف گہرے کھڈ پیدا ہوئے ہیں بلکہ اُن سڑکوں پر معمولی بارشوں کے نتیجے میں پانی جمع ہونے سے لوگوں کا عبور ومرور مسدود ہو کر رہ جاتا ہے جبکہ گرمیوں میں ان کھڈوں سے اٹھنے والی دھول نے راہ گیروں کی ناک میں دم کر رکھا ہے۔شہر کے آلوچی باغ ، چھانہ پورہ ، نٹی پورہ ، مہجور نگر ، برزلہ ، کرسو بنڈ ، ہمدانیہ کالونی بمنہ کے علاوہ ایچ ایم ٹی کی اندرونی سڑکیں انتہائی خستہ حالت میں ہیں جبکہ شہر خاص کے نالہ مار روڑ سے منسلک بیشتر علاقوں کی سڑکوں پر بھی جگہ جگہ گہرے کھڈے پیدا ہوئے ہیں جس سے نہ صرف ٹرانسپوٹروں کو بلکہ عام شہریوں کو بھی عبور ومرور میں سخت مشکلات پیش آرہی ہیں جبکہ بعض سڑکیں ایسی ہیں جن پر عرصہ دراز سے میگڈم نہیں بچھایا گیا ہے ۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ نالہ مار سڑک سے منسلک دونوں جانب آنے والی سڑکیں جن میں نور باغ ، سیکہ ڈافر ، نواکدل ، کاوڈارہ ، ساز گری پورہ ، نرورہ ، راجوری کدل ، نائدکدل ، مہارگنج انتہائی خستہ حالت میں ہیںاور ان میں سے بعض سڑکیں ایسی ہیں جو پچھلے 20برسوں تعمیر ومرمت کی طلب گار ہیں جبکہ ان سڑکوں سے منسلک گلی کوچوں کو متعلقہ محکموں نے مکمل طور پر نظر انداز کیا ہوا ہے۔مقامی لوگوں کے مطابق سکیہ ڈافر سے نواکدل کی اندوانی سڑک ، کائو ڈورہ سے نروارہ عید گاہ اندروانی سڑک براستہ ڈلی پورہ ، راجوری کدل سے حول براستہ سازگری پورہ علم گزری بازار سڑک، راجوری کدل سے عید گاہ نروارہ براستہ مکرپورہ کائو ڈارہ سڑک ، نور باغ سے عید گاہ براستہ وانگن پورہ کی سڑکیں بھی انتہائی خستہ حالت میں ہیں جبکہ سرکار اور انتظامیہ ان سڑکوں کی جانب کوئی دھیان نہیں دے رہی ہے ۔ ادھر کاٹھی دروازہ حس آباد ، رینہ واڑی ، شاہ آباد اور دیگر علاقوںکے لوگوں کا کہنا ہے کہ ان علاقوں کی سڑکیں پہلے سے ہی خستہ حال ہیں وہیں رہی سہی کسر امرت سکیم کے تحت بنائے گے ڈرنیج سسٹم کی تعمیر کے دوران نکالی گئی ہے ۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ ڈرنیج سسٹم بنایا گیا مگر  اب کھڈوں کو بھرنے میں تاخیر ہو رہی ہے اور کہیں پرمین ہولزبغیر ڈھکن کے ہیں ۔