شوپیان میں متعدد تعمیراتی کام تشنہ تکمیل،عوام برہم

عظمیٰ نیوزسروس

سری نگر//شوپیان ضلع میں محکمہ تعمیرات عامہ کی جانب سے متعدد تعمیراتی منصوبوں کوہاتھ میںلینے کے باوجود پایہ تکمیل تک نہیں پہنچایا گیا ہے جبکہ دس دیہات کے لئے زیر تعمیر ویٹرنری ہسپتال10سال سے تشنہ تکمیل ہے ۔ کے این ایس کے مطابق ضلع شوپیان میں محکمہ آر اینڈ بی کے تساہل اور انتظامیہ کے افسران کی خاموشی کی وجہ سے متعدد تعمیراتی پروجیکٹ برسوں سے مکمل نہیں ہورہے ہیں جبکہ کچھ عمارتوںکی تعمیرکے کاموں کیلئے درکا رقم بھی حاصل کی گئی لیکن عمارات تشنہ تکمیل ہیں ۔ علاقے کو ضلع کا درجہ دینے کے چار سال بعد سال2012ء میں زاوورہ نامی گائوں میں10دیہات کے مال مویشیوں کے علاج کے لئے 28لاکھ روپے کی لاگت سے ایک عمارت کا سنگ بنیاد رکھا گیا اور11سال گزر جانے کے باجود بھی یہاں یہ عمارت تشنہ تکمیل ہے اور اس عمارت کو تعمیر کرنے کا مقصد ہی فوت ہوا۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ عمارت کو کھڑا کیا گیا ، لیکن کام مکمل نہیں کیا گیا جس کی وجہ سے عمارت پر زر کثیر خرچ کرنا بے مقصد بن گیا ہے۔انہوں نے کہا اب یہ ادھوری عمارت اوباش نوجوانوںکی آماجگاہ بن گئی ہے۔مقامی لوگوں نے بتایا اس مسئلے کو کئی بار لوگوں نے انتظامیہ کی نوٹس میں لایا گیاتاہم کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی ۔ذرائع نے بتایاضلع میںسوا کروڑ روپے کی لاگت سے چارویٹرنری عمارتوں کو تعمیر کرنے کی منظوری مل گئی ہے جس میں زارورہ،چھترا گام ،ہرمین اور ضلع ہیڈ کوارٹر پر ایک شامل ہیں، جو تمام تشنہ تکمیل ہیں ۔ چودھری گنڈ میں جے کے این پی ایچ سی نے متعدد دیہات کے فروٹ گرورس کے میوے کی گریڈنگ کے لئے ایپل والنٹ گریڈنگ سینٹر کی بنیاد رکھی اور عمارت کو کھڑا کیا گیا ، لیکن کام ادھورا چھوڑا گیا ہے ۔جبکہ درکار مشینری کو بھی یہاں لایا گیا ۔علاقے کے لوگوں نے ان کاموںکو فوری طور پر مکمل کرنے کی اپیل کی ہے۔