شمالی قصبہ بارہمولہ میں گرنیڈ دھماکہ

 بارہمولہ+سوپور//شمالی قصبہ بارہمولہ اور سوپور میں جنگجوئوں نے فوج اور پولیس پر گرینیڈوں سے حملے کئے جس کے نتیجے میں 7راہ گیر زخمی ہوئے ، جن میں دو کو شدید چوٹیں آئیں اور انہیں سرینگر منتقل کیا گیا۔سوپور میں اتوار کی رات گئے وار پورہ میں بھی پولیس چوکی پر گرینیڈ پھینکا گیا تھا۔پولیس کے مطابق قصبہ بارہمولہ میں پیر کے روز ایک بجکر15منٹ پرآزاد گنج پُل کے نزدیک جنگجوئوں نے فوج کے ایک قافلے کو نشانہ بناکر گرینیڈ داغا تاہم گرینیڈ نشانہ چوک کر سڑک کے کنارے زوردار دھماکے کے پھٹ گیا جس کے نتیجے میں سات عام شہری  زخمی ہوئے۔اس دوران سیکورٹی فورسز نے گرینیڈ دھماکے کے بعد پورے علاقے کو محاصرے میں لیکر حملہ آوروں کی تلاش شروع کی ۔ انہوں نے کہا کہ پولیس اس جنگجویانہ کے واقعہ کا جائزہ لے رہی ہے۔پولیس نے اس سلسلے میں پولیس اسٹیشن بارہمولہ میں کیس درج کر کے مزید تفتیش شروع کی ہے۔جو شہری گرینیڈ دھماکے میں زخمی ہوئے ان میں دو بھائی لطیف احمد خان اور منظور احمد خان پسران محمد یوسف خان ساکن فقیر وانی بارہمولہ ،محمد افروز گنائی ولد عبدالصمد گنائی ساکن نادی ہل بارہمولہ، اقرا نذیر دختر نذیر احمد ساکن چکلہ ، طارق احمد چوپان ولد غلام احمد ساکن کانسپورہ ، محمد ایوب ولد محمد ظفر ساکن بنر اورظہور احمد لون ولد محمد اکبر ساکن ہدی پورہ رفیع آباد شامل ہیں۔ زخمیوں کو علاج و معالجہ کیلئے فوری طور پرمیڈیکل کالج بارہمولہ پہنچایا گیا جس میں سے دو شدید زخمی نذیر احمد اور عبدالصمد کو ڈاکٹروں نے سرینگر منتقل کیا جہاں اُن کی حالت تشویش ناک بتائی جاتی ہے ۔ادھر اتوار کی شب وارہ پورہ سوپورپولیس چوکی پر گرینیڈ دھماکہ کرنے کے بعد پیر کی سہ پہر بعد جنگجوئوں نے سوپور جنرل بس سٹینڈ کے باہر پلازہ پولیس پوسٹ پر گرنیڈ پھینکا جو نشانہ چوک کر سڑک پر زور دار دھماکے سے پھٹ گیا تاہم اس سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔بعد میں علاقے میں تلاشیاں لی گئیں۔