شاہد خاقان عباسی پاکستان کے نئے وزیراعظم منتخب

   اسلام آباد//مسلم لیگ (ن) کے امیدوار شاہد خاقان عباسی پاکستان کے نئے وزیراعظم منتخب ہوگئے۔اسپیکر سردار ایاز صادق کی صدارت میں ہونے والے اجلاس میں نئے وزیراعظم کے انتخاب کے لیے ووٹنگ ہوئی۔مسلم لیگ (ن) کے شاہد خاقان عباسی نے 221، پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے سید نوید قمر نے 47، پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور مسلم لیگ (ق) کے مشترکہ امیدوار شیخ رشید احمد نے33 جبکہ جماعت اسلامی کے صاحبزادہ طارق اللہ نے4 ووٹ حاصل کئے۔وزیر اعظم منتخب ہونے کے بعد شاہد خاقان عباسی نے اپوزیشن نشستوں پر جا کر اراکین سے مصافحہ کیا۔شاہد خاقان عباسی نے اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے اپنی جماعت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ میں 'عوام کے وزیراعظم نواز شریف' کا شکرگزار ہوں جبکہ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا بھی شکریہ ادا کرتا ہوں جو ہمیں روز تنقید کا نشانہ بناتے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ’ہم نے سپریم کورٹ کے 28 جولائی کے فیصلے کو من و عن قبول کیا، لیکن پاکستان کے عوام نے اس فیصلے کو قبول نہیں کیا، کوئی قانونی ماہر ایسا نہیں ہے جو اس فیصلے کو مان سکے، لیکن نواز شریف نے اس فیصلے کو قبول کیا، جبکہ ملک کے حقیقی وزیر اعظم نواز شریف جلد واپس آئیں گے۔‘انہوں نے کہا کہ ’نواز شریف کی نااہلی کے بعد پارٹی میں کوئی دراڑ نہیں پڑی، (ن) لیگ کا کوئی رکن بھاگا نہ ٹوٹا، وزیر اعظم کی کرسی پر بیٹھنا ہر رکن کی خواہش ہوتی ہے، لیکن (ن) لیگ کی کامیابی ہے کہ کسی شخص نے یہ نہیں کہا کہ میں اس کرسی تک پہنچنا چاہتا ہوں۔‘نومنتخب وزیر اعظم نے کہا کہ ’ہم بھی اپوزیشن والا کام کرسکتے ہیں لیکن ہماری تربیت ایسی نہیں، ہمارے قائد کا حکم ہے کہ گالی کا جواب شائستگی سے دیا جائے، 30 سال سے نواز شریف کے ساتھ ہوں، گواہی دیتا ہوں نواز شریف نے کبھی کرپشن کا نہیں کہا جبکہ ان پر کرپشن کا کوئی الزام نہیں۔‘انہوں نے کہا کہ ’ملک کو ایٹمی طاقت بنانا نواز شریف کا قصور ہے، ملک کی معیشت کو مضبوط کرنا بھی نواز شریف کا قصور ہے، انصاف کا تقاضہ ہوتا ہے کہ ایک ہزار مجرم چھوٹ جائیں لیکن کسی ایک بے گناہ کو سزا نہ ہو، عدالتی فیصلے کے بعد ایک عدالت اور لگے گی جہاں جے آئی ٹی نہیں ہوگی۔‘ان کا کہنا تھا کہ ’اپوزیشن نے کچھ کام کیا ہوتا تو حکومتی نشستوں پر ہوتے، ایل این جی پر بات کرنی ہے تو 24 گھنٹے حاضر ہوں، سیاست میں آنے سے پہلے میرے اثاثے زیادہ تھے جبکہ میں نے جو کچھ کمایا ہے محنت کر کے کمایا۔‘شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ’آج ملک میں سیاست گالی بن چکی ہے، ہمیں آئین کے مطابق ملک کو آگے لے کر چلنا ہے، ایوان ایک کشتی ہے، چھید ہوا تو سب ڈوب جائیں گے، 45 دن کے لیے آیا ہوں لیکن 45 مہینے کا کام کروں گا، جبکہ الزام لگانے والے سامنے آئیں احتساب کے لیے تیار ہوں۔