سیول و پولیس افسران کی فوری تبدیلی کا حکم الیکشن کمیشن کی بعض یوٹیز اور ریاستوں کو چھوٹ

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر //الیکشن کمیشن کی طرف سے چھوٹ دینے کے بعدجموں و کشمیر میں اب بڑے پیمانے پر تبادلے نہیں ہوں گے۔23فروری کی ہدایات کی روشنی میں منگل 27فروری کو ایک بار پھر الیکشن کمیشن نے سبھی چیف سیکریٹریز کے نام خط میں سبھی سیول و پولیس افسران کو فوری طور پر تبدیل کرنے کی یدایات دی ہیں۔لیکن شام کے وقت کمیشن نے کہا ہے کہ کمیشن کی ہدایت صرف ان علاقوں، ریاستوں اور یوٹیز پر لاگو ہونگے جہاں 5سے زیادہ پارلیمانی نشستیں ہیں۔اپنی ہدایات میں کمیشن نے کہا کہ ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں، جہاںصرف 5 یا اس سے کم پارلیمانی حلقے ہیں، کو مستثنی کیا جائے گا۔

 

اس سے قبل دن میںالیکشن کمیشن نے سبھی ریاستوں کے چیف سیکرٹریز اورتمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے چیف الیکٹورل آفیسرز کو ہدایات دیںلوک سبھا انتخابات کے پیش نظر سبھی ضلع اور صوبائی سطح کے افسران کی فوری طور پر تبادلے کی کارروائی عمل میں لائیں۔اس بات کی ہدایات دی گئیں کہ تمام ڈسڑکٹ و ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسران ، ریٹرننگ اور نائب ریٹرنگ افسران،ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرلز، انسپکٹر جنرلز، ڈی آئی جیز، ایس ایس پیز،ایس پیز، ایڈیشنل ایس پیز اور ڈی ایس پیز اورسرکل آفیسرز یا اس کے مساوی رینک کے پولیس افسران کو اپنی موجودی جگہ سے تبدیل کیا جائے اگر وہ اسی پارلیمانی حلقہ یا اضلاع میں گزشتہ 4 سالوں میں سے 3 سال مکمل کر رہے ہیں۔ اس طرح کمیشن کی 23فروری2024 کی ہدایات صرف مذکورہ افسران پر لاگو ہوں گی۔ مزید برآں، اس بات کو یقینی بنایا جائے گا کہ ریٹرننگ افسر یا اسسٹنٹ ریٹرننگ افسران پارلیمانی حلقے میں تعینات نہ ہوں جو ان کے ہوم ڈسٹرکٹ پر مشتمل ہے۔پارلیمانی حلقوں کے ساتھ ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو کمیشن کی مذکورہ بالا ہدایات مورخہ 23فروری سے مستثنی کیا جائے گا۔متعلقہ ریاستوں کے چیف سکریٹری اور ڈی جی پی سے تعمیل رپورٹ فوری طور پر بھیجنے کیلئے کہا گیا ہے۔