سپریم کورٹ کی پتانجلی کے اشتہارات پرروک کارروائی نہ کرنے پر مرکزی حکومت کی سرزنش

 یو این آئی

نئی دہلی// سپریم کورٹ نے سنگین بیماریوں کے علاج کے دعویٰ والے پتانجلی آیوروید کے مبینہ ’گمراہ کن اور جھوٹے‘ اشتہارات کو لوگوں کی صحت سے ’کھلواڑ‘ کرنے والا قراردیتے ہوئے منگل کو ان پر عبوری روک لگادی اور اس معاملے میں قانونی کارروائی نہ کرنے مرکزی حکومت کی سرزنش کی۔جسٹس ہیما کوہلی اور جسٹس احسن الدین امان اللہ کی بنچ نے انڈین میڈیکل ایسوسی ایشن کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے اس معاملے میں قانون کے مطابق کارروائی نہ کرنے پر مرکز کی سرزنش کی اور کہا کہ انتباہ کے باوجود گمراہ کن اشتہارات کے ذریعے لوگوں کی صحت سے کھلواڑ کیا جا رہا ہے۔سپریم کورٹ نے پتانجلی کو بی پی، ذیابیطس، دمہ اور کچھ دیگر بیماریوں سے متعلق تمام اشتہارات جاری کرنے سے عبوری روک لگا دی۔عدالت عظمیٰ نے مبینہ طور پر گمراہ کن اشتہارات جاری رکھنے کے لئے پتانجلی آیوروید اور اس کے منیجنگ ڈائریکٹر (ایم ڈی) آچاریہ بال کرشنا کو توہین عدالت کے لیے وجہ بتاؤ نوٹس جاری کیا۔بنچ نے کہا کہ عدالت بابا رام دیو اور آچاریہ بال کرشن کو توہین عدالت کی کارروائی میں فریق بنائے گی کیونکہ ان کی تصاویر اشتہار میں ہیں۔عدالت عظمیٰ نے پتانجلی آیوروید کو کئی بیماریوں کے علاج کیلئے اپنی دوائیوں کے اشتہارات میں ’جھوٹے‘ اور’گمراہ کن‘ دعویٰ کرنے پر گزشتہ سال نومبر میں متنبہ کیا تھا۔مرکزی حکومت کی عدم فعالیت پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے عدالت عظمیٰ نے کہا کہ عرضی سال 2022 میں داخل کی گئی تھی۔