سوپور شبانہ معرکہ آرائی اختتام پذیر| مطلوب کمانڈر سمیت3جنگجو جاں بحق

سوپور // براٹھ کلاںسوپور میںخونین شبانہ معرکہ کے دوران شمالی کشمیر کا سب سے مطلوب کمانڈر اپنے دو ساتھیوں سمیت جاں بحق جبکہ ایک فوجی اہلکار زخمی ہوا۔تصادم آرائی میں ایک مکان کو شدید نقصان پہنچا۔

تصادم کیسے ہوا؟

پولیس نے بتایا کہ اتوار کی شب قریب 9بجے انہیں براٹھ سوپور نامی گائوں میں 3جنگجوئوں کی موجودگی کی اطلاع ملی جس کے بعدگائوں کو محاصرے میں لیکر تانترے محلہ کی ناکہ بندی کی گئی جہاں جنگجوئوں کی مصدقہ طور پر اطلاع ملی تھی۔پولیس نے بتایا کہ 22آر آر،177,179اور92بٹالین سی آر پی ایف کی خدمات حاصل کی گئیں اور رات 10بجے جونہی تلاشی کارروائی کا آغاز کیا گیا تو یہاں ایک سابق جنگجو کے مکان میں موجود جنگجوئوں نے فائرنگ کی جس کے بعد طرفین کے درمیان فائرنگ کا سلسلہ شروع ہوا جو صب 3بجے تک جاری رہا۔فائرنگ کے تبادلے میں ایک فوجی اہلکار زخمی ہوا جس کے کندھے پر گولی لگی۔ اسے فوجی اسپتال بادامی باغ منتقل کردیا گیا۔پولیس کا کہنا ہے کہ جنگجوئوں نے محاصرہ  توڑنے کی کئی بار کوششیں کیں لیکن وہ ناکام رہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ صبح کے وقت کچھ دیر کیلئے فائرنگ کا سلسلہ تھم گیا لیکن بعد میں دوبارہ شروع ہوا ، جس میں 3جنگجو جاں بحق ہوئے۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ رات بھر دھماکے سنے گئے اور جس رہائشی مکان میں جنگجو موجود تھے، اسے شدید نقصان پہنچا۔بعد میں جنگجوئوں کی شناخت لشکر طیہ کا اعلیٰ کمانڈر مدثر احمد پنڈت ساکن ڈانگر پورہ سوپور ،خورشید احمد میر ساکن براٹھ کلان سوپور اور پاکستان کا اسرار عرف عبداللہ شامل ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ تینوں جنگجو ملی ٹینسی کی متعدد وارداتوں اور شہریوں ، فورسز اہلکاروں، سابق جنگجوئوں ، سرپنچوں، حریت کارکنوںاور علیحدگی پسند لیڈروں کی ہلاکتوں میںملوث تھے۔ انہوںنے کہاکہ جنگجوئوں کا یہ گروپ 2بڑے حملوں میں ملوث تھا۔انہوںنے کہاکہ29مارچ کوکئے گئے حملہ میں 2میونسپل کونسلر اور پولیس اہلکار مارے گئے جبکہ 12جون کو سوپور مارکیٹ میں2پولیس اہلکار اور 2عام شہری مارے گئے۔
 

 حادثاتی گولی چلنے سے پولیس اہلکار زخمی

 زینہ پورہ میں فورسز پارٹی پر فائرنگ

شاہد ٹاک
 
 شوپیان //شوپیان کے مضافات میں ایک پولیس کانسٹیبل فائرنگ رینج میں مشق کرتے ہوئے گولی لگنے سے زخمی ہوا۔ادھر زینہ پورہ علاقے میں فورسز کی گشتی پارٹی پر جنگجوئوں نے گھات لگا کر حملہ کیا تاہم کوئی نقصان نہیں ہوا۔ کاٹھوہالن کیلر علاقے میں62آر آر کیمپ کے اندر بنائے گئے فائرنگ رینج میں فائرنگ کی مشق کے دوران پولیس اہلکار سجاد احمد بندوق سے اچانک گولی چلنے سے زخمی ہوا۔گولی اسکے پیر میں جالگی جس کے فوراً بعد اسے نزدیکمی اسپتال پہنچایا گیا جہاں اسکی حالت مستحکم ہے۔ادھرذرائع کے مطابق جنگجوئوںنے پیر کی شام قریب 5 بجکر 30 منٹ پر بابہ پورہ زینہ پورہ علاقہ میں سی آر پی ایف کی 178 بٹالین کی  ناکہ پارٹی پر فائرنگ کرکے حملہ کیا ۔اس موقعہ پر طرفین میں گولیوں کا مختصر تبادلہ ہوا لیکن جنگجو فرار ہوئے۔بعد میںفورسز اہلکاروں نے علاقے کو محاصرے میں لیکر تلاشی آپریشن شروع کیا جو کئی گھنٹوں تک جاری رہا۔