سندھ طاس کمیشن کی دو روزہ میٹنگ دلی میں

 نئی دہلی // بھارت اور پاکستان مستقل سندھ طاس کمیشن کی دو روزہ میٹنگ جمعرات سے نئی دہلی میں منعقد ہورہی ہے۔یہ کمیشن کی 114ویں میٹنگ ہوگی، کمیشن کی میٹنگ سال میں ایک مرتبہ ضرور ہوتی ہے۔ بھارت کے کمیشن کے چیئر مین پی کے سکسینہ، دیگر تکنیکی اراکین اور وزارت خارجہ کے نمائندے بھارت کی نمائندگی کریں گے جبکہ پاکستان کی طرف سے سید محمد مہر علی شاہ اپنے وفد کی سربراہی کریں گے۔29اور30مارچ کو منعقد ہونے والی میٹنگ میں خاص طور پر جموں و کشمیر میں بنائے جارہے پاور پروجیکٹوں پر پاکستانی اعتراضات پر بات چیت ہوگی۔ریٹلے پروجیکٹ، پکل ڈول اوع لور کلنائی پروجیکٹوں پر پاکستان کا اعتراض ہے۔ان پروجیکٹوں کے بارے میں دونوں ملکوں کے مابین بات چیت پہلے بھی ہورہی ہے۔پاکستان کا کہنا ہے کہ ریٹلے، پکل ڈول اور لور کلنائی پروجیکٹ ، جو دریائے سندھ پر بن رہے ہیں، کے ڈیزائن سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی ہے۔لیکن بھارت کا ماننا ہے کہ ڈیزانوں میں کوئی خرابی نہیں۔بتایا جاتا ہے کہ کشن گنگا پروجیکٹ کا معاملہ اس میٹنگ میں نہیں اٹھایا جائے گا۔