سری نگر میںکئی دکانیںاورکمرے مقفل | وقف بورڈ کا کرایہ ادا نہ کرنے کا شاخسانہ

عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر//جموں و کشمیر وقف بورڈ کی طرف سے چیئرپرسن ڈاکٹر سید درخشاں اندرابی کی ہدایات پر شروع کی گئی مہم کے تسلسل میں، جمعرات کی صبح سری نگر کے خانقاہ مولا علاقے میں 10 عدد وقف دکانوںاورکمروں کو سیل کر دیا گیا۔صارفین کے پاس بقایا جات کی بڑی رقم تھی اور وہ نظرثانی شدہ کرایہ ادا کرنے میں ناکام رہے تھے۔ معلوم ہوا ہے کہ یوٹی بھر کے وقف املاک کے صارفین نے گزشتہ سال وقف حکام کے ذریعہ لاگو کرائے پر نظر ثانی کے خلاف ہائی کورٹ سے رجوع کیا تھا۔ تاہم، ایک حالیہ فیصلے میں عدالت نے صارفین کو وقف حکام کی جانب سے بے دخلی سے بچنے کے لیے زیر التواء اور نظرثانی شدہ کرایہ فوری طور پر ادا کرنے کی ہدایت کی ہے۔متروکہ وقف املاک کے صارفین کی طرف سے کرایہ اور بقایا جات کی ادائیگی کا زمینی جائزہ لینے کے لیے ڈاکٹر اندرابی نے گزشتہ ہفتے ذاتی طور پر سری نگر میں مائسمہ کمپلیکس کا دورہ کیا تھا۔ صارفین کی ایک بڑی تعداد کے پاس کرایہ کے بڑے بقایا پائے گئے۔ وقف چیئرپرسن نے صارفین کو متنبہ کیا تھا کہ وہ کسی قانونی کارروائی سے بچنے کے لیے زیر التواء کرایہ ادا کریں۔