سری نگر: حاجت ِ بشر ی کے لئے بیت الخلا سے محروم’’ سمارٹ سِٹی‘‘ ! خواتین، چھوٹے بچوں،بزرگوںاور سیاحوں کی مشکلات میں مزیداضافہ

ڈاکٹر فیاض فاضلى

شہرسری نگر، جموں اور کشمیر کا موسم گرما کا دارالحکومت ایک پسندیدہ سیاحتی مقام ، اکثر اپنے دلکش مناظر، تاریخی اہمیت اور ثقافتی دولت کی وجہ سے مشہور جانا جاتا ہے ۔حال ہی میں اِسے ملک کے پرجوش اسمارٹ سٹیز مشن میں بھی شامل کیا گیا ہے، جس کا مقصد پائیدار اور ٹیکنالوجی پر مبنی حل کے ذریعے شہری زندگی کو بڑھانا ہے۔ تاہم ان پیش رفتوں کے درمیان، ایک واضح مسئلہ حل طلب ہے۔ (پبلک ٹوائلٹ) بیت الخلاکی سہولیات کی شدید کمی نہ صرف شہر کی سمارٹ سٹی کی لوازمات کو کمزور کرتی ہے بلکہ مقامی لوگوں اور سیاحوں کی روزمرہ کی مشکلات میں بھی اضافہ کرتی ہے۔
شہری منصوبہ بندی میں عوامی بیت الخلاء کی اہمیت:۔عوامی بیت الخلا شہری بنیادی ڈھانچے کا ایک لازمی جزو ہیں، جو عوامی مقامات پر حفظان صحت اور وقار کو برقرار رکھنے کے لیے اہم ہیں۔خواتین کے لیے، مخصوص جسمانی ضروریات اور صنفی بنیاد پر تشدد کے خطرے کی وجہ سے صاف اور محفوظ عوامی بیت الخلاء کی دستیابی خاص طور پر اہم ہے۔ عوامی صفائی کی ناکافی سہولیات اہم تکلیف اور صحت کے مسائل کا باعث بن سکتی ہیں، جیسے پیشاب کی نالی کے انفیکشن اور عوامی زندگی میں خواتین کی شرکت کو محدود کر سکتے ہیں، جس سے ان کی نقل و حرکت کی آزادی اور معاشی مواقع متاثر ہوتے ہیں۔
شہرسری نگر میں عوامی بیت الخلاء کی موجودہ حالت: ۔سری نگر میں عوامی بیت الخلا کی سہولیات انتہائی ناکافی ہیں۔ چند فعال عوامی بیت الخلاء ہیں اور جو موجود ہیں وہ اکثر ناقص دیکھ بھال، صفائی کی کمی اور حفاظتی خدشات کا شکار ہیں۔بہت سے بیت الخلا یا تو بند پڑے ہیں یا اس قدر افسوسناک حالت میں ہیں کہ وہ ناقابل استعمال ہیں، جس کی وجہ سے خاص طور پر خواتین کو متبادل تلاش کرنے یا طویل سفر سے مکمل طور پر گریز کرنے پر مجبور کر رہے ہیں۔ 2022 میں مقامی این جی اوز کے ذریعہ کرائے گئے ایک سروے سے یہ بات سامنے آئی کہ شہر کے 20 فیصد سے بھی کم عوامی بیت الخلاءقابل استعمال تھے۔ باقی یا تو بند تھے، بہتے ہوئے پانی اور صابن جیسی بنیادی سہولیات کی کمی تھی یا اپنے مقام یا کم روشنی کی وجہ سے غیر محفوظ سمجھے جاتے تھے۔ یہ صورت حال خاص طور پر خواتین، بچوں، بزرگ شہریوں اور معذور افراد کے لیے مشکل ہے، جو عوامی صفائی کی ناکافی سہولیات سے غیر متناسب طور پر متاثر ہوتے ہیں۔
خواتین پر اثرات:۔عوامی بیت الخلاء کی کمی کا خواتین پر واضح اثر پڑتا ہے۔ راج باغ گرلز اسکول بنڈکے قریب میں نے دیکھا دو خواتین عوامی بیت الخلا کی سہولت کے لیے شدت سے تلاش کر رہی تھیں، بالآخر قریبی مسجد کی طرف رہنمائی کی گئی۔ افسوس کہ ہماری مساجد میں بھی خواتین کے لیے سہولیات نہیں ہیں۔ نہ صرف مقامی لوگوں کے لیے بلکہ خواتین سیاحوں کے لیے بھی حاجت بشریہ کامسئلہ شہر کے پُرکشش مقامات کے ارد گرد سہولیات تلاش کرنے کے لیے شروع ہو جاتا ہے۔
مشہور سیاحتی مقامات جیسے ڈل جھیل، مغل باغات اور ہلچل سے بھرے بازار یا تو عوامی بیت الخلاء سے خالی ہیں یا پھر ایسی سہولیات ہیں جو استعمال کے قابل نہیں ہیں۔ ۔ خواتین ، طالب علموں اور کارکنوں کے لیے جو اپنے گھروں کے باہر طویل وقت گزارتی ہیں صاف پبلک ٹوائلٹس کی عدم موجودگی روزانہ کی جدوجہد ہے۔ بہت سے لوگوں کو گھر واپس آنے تک انتظار کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے، جس سے اہم تکلیف اور صحت کے ممکنہ مسائل پیدا ہوتے ہیں۔ ایامِ حیض کے دوران صورت حال بدتر ہوتی ہے، جب صاف ستھرےسہولیات کی ضرورت اس سے بھی زیادہ نازک ہوتی ہے۔عوامی بیت الخلا کی سہولیات کا فقدان، خاص طور پر خواتین کے لیے، بہت سی جگہوں پر ایک اہم مسئلہ ہے، جس میں خواتین کے حقوق کے لیے کام کرنے والی این جی اوز کو ضروری تبدیلیوں پر زور دینا شامل ہے۔ یہ شہری منصوبہ بندی، صحت عامہ اور صنفی مساوات سے متعلق وسیع تر مسائل کو اجاگر کرتا ہے۔ یہاں کچھ اقدامات ہیں جو اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے اٹھائے جا سکتے ہیں۔
عوامی انفراسٹرکچر کو بہتر بنانا: ۔میونسپلٹیوں کو صاف، محفوظ عوامی بیت الخلاء کی تعمیر اور دیکھ بھال کو ترجیح دینے کی ضرورت ہے۔ اس میں اس بات کو یقینی بنانا شامل ہے کہ زیادہ ٹریفک والے علاقوں جیسے کہ اسکولوں کے قریب، بازاروں اور عوامی نقل و حمل کے مراکز میں سہولیات دستیاب ہوں۔
صنف پر مشتمل سہولیات:۔عوامی بیت الخلاء کو خواتین، مردوں، بچوں، اور معذور افراد سمیت ہر ایک کے رہنے کے لیے ڈیزائن کیا جانا چاہیے۔ یہ زیادہ صنفی غیر جانبدار اور خاندانی بیت الخلاء بنا کر حاصل کیا جا سکتا ہے۔
مذہبی اداروں کے ساتھ شراکت: ۔مساجد، مندر اور گرجا گھر جیسے مذہبی ادارے عوامی بیت الخلاء فراہم کر کے اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ خواتین کو شامل کرنے کے لیے سہولیات کی تعمیر یا اپ گریڈ کرنے کے لیے ان اداروں کے ساتھ تعاون نمایاں طور پر رسائی کو بہتر بنا سکتا ہے۔
سماجی اور اقتصادی اثرات:۔عوامی بیت الخلا کی ناکافی سہولیات کے اثرات ذاتی تکلیف اور صحت کے مسائل سے بڑھ کر ہیں۔ ان کے وسیع تر سماجی اور معاشی اثرات بھی ہیں۔یہ خواتین کے لیے معاشی مواقع اور مالی آزادی میں کمی کا باعث بن سکتا ہے۔ سیاحت مقامی معیشت میں ایک اہم شراکت دار ہے اور کوئی بھی عنصر جو سیاحوں کے آرام اور حفاظت کو روکتا ہے اس کے منفی معاشی نتائج ہو سکتے ہیں۔ صفائی کے ناقص انتظامات کے بارے میں منفی جائزے اور زبانی باتیں سیاحوں کے لیے دوستانہ مقام کے طور پر شہر کی ساکھ کو داغدار کر سکتی ہیں۔
عملی اقدامات، اقدامات اور حل:۔سری نگر میں عوامی بیت الخلا کے بحران سے نمٹنے کے لیے ایک کثیر جہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے جس میں حکومتی کارروائی، عوامی بیداری اور کمیونٹی کی شمولیت شامل ہو۔ شہری منصوبہ بندی اور ترقیاتی منصوبوں میں عوامی بیت الخلاء کو شامل کرنے کی ضرورت والی پالیسی میں تبدیلیوں کی وکالت طویل مدتی حل پیدا کر سکتی ہے۔ میونسپل یا سمارٹ سٹی حکام کو عوامی بیت الخلاء کی تعمیر اور دیکھ بھال کو ترجیح دینی چاہیے، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ وہ پورے شہر میں یکساں طور پر تقسیم ہوں، خاص طور پر زیادہ ٹریفک والے علاقوں میں۔ اس میں جدید، حفظان صحت اور محفوظ سہولیات کی تعمیر کے لیے اسمارٹ سٹیز مشن کے فنڈز کا فائدہ اٹھانا شامل ہے۔
پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ:۔پرائیویٹ اداروں کو عوامی بیت الخلاء کی تعمیر اور دیکھ بھال میں حصہ لینے کی ترغیب دینے سے اس خلا کو پر کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ عوامی بیت الخلاء کو برقرار رکھنے کے عوض کاروبار کو ٹیکس میں چھوٹ یا اشتہاری مواقع کے ذریعے ترغیب دی جا سکتی ہے۔
تکنیکی حل: ۔موبائل ایپس اور ویب سائٹس جیسے سمارٹ حل کو نافذ کرنا جو قریب ترین پبلک ٹوائلٹ کا پتہ لگانے میں مدد کرتے ہیں، بیت الخلاء صفائی اور دستیابی کے بارے میں حقیقی وقت کی معلومات فراہم کرتے ہیں۔ ان ٹولز میں صفائی اور حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے صارف کے جائزے اور درجہ بندی شامل ہو سکتی ہے۔
کمیونٹی کی شمولیت:۔عوامی بیت الخلاء کی دیکھ بھال اور نگرانی میں مقامی کمیونٹیز کو شامل کرنا بہتر دیکھ بھال اور ملکیت کے احساس کو یقینی بنا سکتا ہے۔ خواتین کے گروپس اور این جی اوز بہتر سہولیات کی وکالت کرنے اور عوام کو صفائی ستھرائی کی اہمیت سے آگاہ کرنے میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔
حفاظتی اقدامات:۔اس بات کو یقینی بنانا کہ عوامی بیت الخلاء اچھی طرح سے روشن ہوں، مناسب حفاظتی اقدامات سے آراستہ ہوں، اور محفوظ علاقوں میں واقع ہوں انہیں خواتین کے لیے قابل رسائی بنانے کے لیے بہت ضروری ہے۔ ان سہولیات کے قریب گھبراہٹ کے بٹن اور پولیس کا باقاعدہ گشت حفاظت کو بڑھا سکتا ہے۔
بیداری کی مہمات:۔عوامی بیداری کی مہمات عوامی بیت الخلاء کے استعمال اور برقرار رکھنے کی اہمیت کے بارے میں رویوں کو تبدیل کرنے اور توڑ پھوڑ اور غلط استعمال کو کم کرنے میں مدد کر سکتی ہیں۔ مہموں، درخواستوں اور مقامی حکومتوں کے ساتھ تعاون کے ذریعے اس مسئلے کے بارے میں بیداری پیدا کرنا کارروائی کا باعث بن سکتا ہے۔
ڈیجیٹل ٹوائلٹس,پورٹیبل حل:۔لیل مدت میں، پورٹیبل بیت الخلاء کو زیادہ مانگ والے علاقوں میں تعینات کیا جا سکتا ہے۔ یہ تقریبات (زیارتوں، تہواروں یا مستقل سہولیات کے منتظر علاقوں میں) کے دوران عارضی حل ہو سکتے ہیں۔
صفائی کے معیارات اور متواتر آڈٹ:۔آزاد اداروں کی طرف سے باقاعدگی سے معائنہ اور آڈٹ اس بات کو یقینی بنا سکتے ہیں کہ عوامی بیت الخلا صحت، حفظان صحت اور حفاظتی معیارات پر پورا اترتے ہیں۔ ان سہولیات کے معیار اور رسائی کو مسلسل بہتر بنانے کے لیے فیڈ بیک میکانزم قائم کیا جانا چاہیے۔ جہاں سمارٹ سٹیز مشن میں سری نگر کی شمولیت شہری ترقی میں ایک قدم آگے بڑھنے کی نشاندہی کرتی ہے، وہیں عوامی بیت الخلاء کی مناسب سہولیات کی کمی ایک ایسے نازک علاقے کو نمایاں کرتی ہے جس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ شہر کو صحیح معنوں میں سمارٹ اور جامع بننے کے لیے، اسے اپنے تمام رہائشیوں اور آنے والوں خصوصاً خواتین کی بنیادی ضروریات کو پورا کرنا چاہیے۔ اس بات کو یقینی بنانا کہ خواتین کو محفوظ اور صاف ستھرے بیت الخلاء تک رسائی حاصل ہو صرف سہولت کا معاملہ نہیں ہے بلکہ صحت عامہ اور انسانی حقوق کا ایک بنیادی مسئلہ ہے۔ عوامی صفائی کے بنیادی ڈھانچے میں سرمایہ کاری کرکے، کمیونٹی کو شامل کرکے، اور ٹیکنالوجی کا فائدہ اٹھا کر، سری نگر اس چیلنج پر قابو پا سکتا ہے اور اس بات کو یقینی بنا سکتا ہے کہ سمارٹ سٹی کی حیثیت کی طرف اس کی پیشرفت جامع اور جامع ہو۔ عوامی زندگی میں خواتین کی فلاح و بہبود، وقار اور شرکت اس پر منحصر ہے.
(مضمون نگار مبارک ہسپتال میں میڈیکل ڈاکٹر ہونے اور صحت کی دیکھ بھال کے معیار، اخلاقی اور سماجی مسائل کے حوالے سے مثبت سوچ کے انتظام میںسرگرم ہیں۔ ان سے [email protected] اور twitter@drfiazfazil پر رابطہ کیا جا سکتا ہے)