سری نگر- جموں قومی شاہراہ پر پسیاں گرآنے سے آمدورفت معطل

سری نگر//وادی کشمیر کو ملک کے باقی حصوں کے ساتھ جوڑے والی270 کلو میٹر طویل سری نگر – جموں قومی شاہراہ کو جمعرات کی صبح رام بن کے چملواس علاقے میں مٹی کے تودے کھسک آنے کے بعد ایک بار پر بند کر دیا گیا۔
 
تاہم حکام کا کہنا ہے کہ شاہراہ پر ٹریفک کی نقل و حمل بحال کرنے کے لئے کام شد ومد سے جاری ہے۔
 
ایک ٹریفک پولیس عہدیدار نے بتایا کہ قومی شاہراہ پر چملواس بانہال علاقے میں جمعرات کی صبح مٹی کے تودے کھسک آگئے جس کے پیش نظر شاہراہ پر ٹریفک کی نقل و حمل روک دی گئی۔
 
انہوں نے کہا کہ شاہراہ کو صاف کرنے کے لئے مشینری اور نفری کو کام پر لگا دیا گیا ہے اور اس کو کم سے کم وقت میں قابل آمد و رفت بنانے کی کوششیں جا ری ہیں۔
 
ادھر وادی کو لداخ یونین ٹریٹری کے ساتھ جوڑنے والی سری نگر- لیہہ شاہراہ اور جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیاں کو صوبہ جموں کے ضلع پونچھ کے ساتھ جوڑنے والے تاریخی مغل روڈ پر ٹریفک کی نقل و حمل مسلسل بند ہے۔
 
قابل ذکر ہے کہ قومی شاہراہ کا بند ہونا اہلیان وادی کے لئے گوناگوں مشکلات کا باعث بن جاتا ہے۔
 
لوگوں کا کہنا ہے کہ قومی شاہراہ بند ہوتے ہی جہاں وادی کے بازاروں میں اشایئے ضروریہ بالخصوص اشیائے خوردنی کی قلت پید اہوجاتی ہے وہیں دوسری طرف گراں بازاری بھی آسمان چھونے لگتی ہے۔
 
انہوں نے کہا کہ یہاں چیزوں کی قیمتیں یکایک اس قدر بڑھ جاتی ہیں کہ ان کا خریدنا ایک عام انسان کے بس کی بات نہیں رہ جاتی ہے۔