سرینگر کے 7سکولوں کیلئے بورڈ سہولیات معطل

سرینگر//حکام نے سرینگر کے 7 معروف نجی تعلیمی اداروںکو حاصل بورڈ آف اسکول ایجوکیشن سہولیات معطل کرنے کے احکامات جاری کئے ہیں۔ان اسکولوں پر الزام ہے کہ انہوں نے سرکار کی جانب سے تشکیل شدہ فیس متعین کرنے والی کمیٹی کے احکامات کی خلاف ورزی اور زیر تعلیم طلاب کے والدین کو ہراساں کیا۔ جموں کشمیر بورڈ آف اسکول ایجوکیشن کے جوائنٹ سیکریٹری کی جانب سے جاری حکم نامہ زیر نمبر63-GEn  of 2021 میں ڈائریکٹر اسکول ایجوکیشن کشمیر کی جانب سے جاری کردہ آرڈر کا حوالہ دیا گیاہے،جس میں فیس متعین کرنے والی کمیٹی کے احکامات کی عدم تعمیل اور والدین کو ان نجی اسکولوں کی جانب سے ہراساں کرنے کی بات کی گئی ہے۔ حکم نامہ میں کہا گیا ہے کہ ان7 اسکولوں کو تدریسی سیشن سال220-21کیلئے بورڈ کی طرف سے دی جانی والی سہولیات معطل کردی گئی ہیں۔ بورڈ جوائنٹ سیکریٹری کے احکامات کے مطابق جن سہولیات کو بورڈ نے معطل کیا ہے ، ان میں دسویں، گیارہویں اور بارہویں جماعت میں رجسٹریشن ریٹرن، پرمشن وداخلی فارمز کی حصولیابی کا عمل شامل ہے۔ 7نجی سکولوںکو دی جانے والی یہ سہولیات تب تک معطل رہیں گی جب تک نہ  انہیںڈائریکٹر سکول ایجوکشن کشمیر سے’’ این ائو سی‘‘نہیں ملتی۔ بورڈ کی طرف سے جن 7نجی سکولوں کو دی جانے والی سہولیات معطل کی گئی ہیں ، ان میں اقبال میموریل انسٹی ٹیوٹ(بائز اینڈ گرلزونگ)بمنہ سرینگر، ہولی فیتھ پریزنٹیشن سکول کنال ایونیو راولپورہ سرینگر، ہیٹرک سکول زکورہ سرینگر، ٹائینی ہارٹس سکول ٹینگہ پورہ بائی پاس سرینگر، گرین ویلی ایجوکیشن انسٹی ٹیوٹ الہی باغ بژھ پورہ سرینگر، جے کے پبلک سکول ہمہامہ بڈگام اور پرزنٹیشن کانونٹ ہائر سکینڈری سکول راجباغ سرینگر شامل ہیں۔جوائنٹ سیکریٹری کے احکامات کے مطابق تمام متعلقین کو ہدایت دی گئی کہ کہ وہ مذکورہ سکولوں کے معاملات و امور کو  بورڈ کی جانب سے جاری آئندہ احکامات تک خاطر میں نہ لائیں۔