سرینگر کے 15ریڈ زون علاقوں کی ناکہ بندی سخت

سرینگر// انتظامیہ کی جانب سے ریڈ زونوں میں عائد بندشوں کو سخت کردیا گیا ہے۔ریڈ زونوں میں رہائش پذیر لوگوں کو اپنے گھروں سے باہر آنے یا ان علاقوں میں کسی کو جانے کی کوئی اجازت نہیں دی جارہی ہے جبکہ شہر سرینگر میں  مقامی لوگوں نے رضا کارانہ طور پر اپنے اپنے علاقوں کو سیل کر کے ان میں غیر مقامی لوگوں پر پابندی عائد کردی ہے۔انتظامیہ نے نہ صرف سرینگر میں ریڈ زون قرار دیئے گئے علاقوں کو سیل کر نے کیلئے لوہے کی سلاخوں سے سڑکیں بند کردی ہیں بلکہ لگاتار پولیس کی گشت کی جارہی ہے تاکہ لوگوں کو گھروں سے باہر نہ آنے دیا جائے۔یہ صورتحال نہ صرف سرینگر شہرکے ریڈ زونوں میں ہے بلکہ سبھی اضلاع کے جتنے بھی علاقے ریڈ زون قرار دیئے گئے ہیں وہاں اسی طرح کی صورتحال ہے۔ریڈ زون علاقوں میں گھر گھر جا کر میڈیکل ٹیمیں لوگوں سے نمونے حاصل کرنے کا عمل شروع کررہی ہیں اور کئی علاقوں میں اس عمل کا آغاز بھی کیا گیا ہے۔لاک ڈائون میں توسیع کیساتھ شہر کے کئی علاقوں میں جہاں سڑکیں سیل نہیں کی گئیں تھیں میں منگل کو رکاوٹیں کھرا کی گئیں اور علاقوں کو مکمل طور پر سیل کیا گیا۔ان علاقوں کی نگرانی ڈرون کمیروں کی کی جارہی ہے ۔ شہر میں لوگوں نے از خود بھی علاقے سیل کئے ہیں، جو ریڈ  زون قرار نہیں دیئے گئے ہیں۔متعد علاقوں کو کورونا وائرس سے محفوظ رکھنے کیلئے لوگوں نے رضاکارانہ طور پر اپنے اپنے علاقے سیل کردیئے ہیں جہاں کسی بھی غیر مقامی شخس کو اندر جانے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے۔مقامی نوجوان سڑکوں پر کورونا سے بچائو کے لباس پہنے ہوئے ہیں اور رابطہ سڑکوں کو بند کردیا گیا ہے۔ضلعی انتظامیہ کے ایک بیان کے مطابقسری نگر میں کووڈ۔ 19کنٹیمنٹ زونوں کو جامع منصوبے کے مطابق سیل کیا گیا تاکہ حکومت کی طرف سے اس حوالے سے نوٹیفائی کئے گئے ایس او پی پر سختی سے عمل کی جاسکے۔اعلان کئے گئے کنٹیمنٹ زونوںکے تمام علاقوں کے داخلہ پوائنٹس کو سیل کیا گیا ہے اور کم سے کم نصف داخلہ پوائنٹوں کو ہٹائے جانے والی رکاوٹوں سے بند کیا گیا ہے تاکہ ضرورت پڑنے پر ان علاقوں میں داخلے کو ممکن بنایا جاسکے ۔واضح رہے کہ سری نگر میں 15علاقوں کو ریڈ زون یا کنٹیمنٹ زون قرار دیا گیا ہے ۔ان میں عید گاہ( ایک داخلہ پوائنٹ ہٹائے جانے والے رکاوٹوں سے سیل کیا گیا)، گوری پورہ  (۲) ، نوشہرہ (۲) ، حول (۳) ، احمد نگر ( ۱) ، لال بازار (۱) ، حیدر پورہ (۱) ، نٹی پورہ ( ۶) ، جواہر نگر ( ۲)، چھتہ بل (۴) ، بمنہ (۴) ، ٹینگہ پورہ ( ۲) ، خیام (۷)، نشاط (۴) اور لسجن (۵ ) شامل ہیں۔ان سبھی علاقوں کی مقامی محلہ کمیٹیوں کے ساتھ بھی رابطہ قائم کیا گیا تاکہ کووڈ۔19کو ان علاقوں سے باہر پھیلنے کو روکنے کے لئے انتظامیہ کی کوششوں کو تقویت بخشی جاسکے۔دریں اثنا انتظامیہ نے ان علاقوں کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے ایک جامع لائحہ عمل اختیار کیا ہے تاکہ ان علاقوں میں پابندیوں کے دوران لوگوں کو دقتوں کا سامنا نہ کرناپڑے۔اس لائحہ عمل میں نگرانی سرگرمیوں کی عمل آوری ، اشیائے ضروریہ کی دستیابی اور دیگر پہلوئوں کا خاص خیال رکھا گیا ہے۔ ان علاقوںمیں سینکڑوں کی تعداد میں اہلکاروں کو تعینا ت کیا گیا ہے اور متعلقہ افسروں اور محکموں کو سہولیات کی دستیابی کے لئے ذمہ دار بنایا گیا ہے۔رابطے کو یقینی بنانے کے لئے مشترک کنٹرول روم ہر ایک ریڈ زون میں قائم کئے گئے ہیں جن کے لئے نوڈل افسربھی مخصوص کئے گئے ۔