سرینگر میں 4.40لاکھ سے زیادہ گولڈن کارڈ اجراء | ضلع ترقیاتی کمشنر نے صحت سکیم کی پیش رفت کا جائزہ لیا

سرینگر// سرینگر ضلع میں  اور جاری کردہ گولڈن کارڈوں کے تحت مستحقین کی رجسٹریشن کی پیش رفت کا جائزہ لینے کیلئے ڈپٹی کمشنرسرینگر محمد اعجاز اسد نے ہفتہ کوافسران کی ایک میٹنگ کی صدارت کی۔میٹنگ کے دوران ضلع سرینگر میں صحت سکیم کے نفاذ کے حوالے سے موجودہ صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔ میٹنگ میں صحت اسکیم کے تحت رجسٹریشن کے عمل کو تیز کرنے کے طریقوں پر بھی تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا اور سرینگر میں ہر شہری کو گولڈن کارڈ فراہم کرنے کے مقررہ ہدف کو حاصل کرنے کے لیے حکمت عملی وضع کی گئی۔اس موقع پر ڈپٹی کمشنر نے تمام متعلقہ افراد کو بڑے پیمانے پر متحرک ہونے کی ہدایات جاری کیں تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ اس اسکیم کے تحت رہ جانے والی آبادی کا احاطہ کیا جائے تاکہ وہ گولڈن کارڈ کے فوائد کے حقدار ہوں۔ انہوں نے متعلقہ حکام کو یہ بھی ہدایت کی کہ وہ رجسٹریشن کے عمل کو تیز کرنے کے لیے ضلع میں بڑے پیمانے پر بیداری پیدا کرنے کے لیے دیگر محکموں سے رابطہ کرکے مشن موڈ پر انفارمیشن ایجوکیشن اینڈ کمیونیکیشن (آئی ای سی) کی سرگرمیاں شروع کریں۔انہوں نے تمام زیڈ ایم اوز اور بی ڈی اوز کو ہدایت کی کہ وہ اپنے اپنے دائرہ اختیار میں نچلی سطح کے کارکنوں کی خدمات کو بروئے کار لاتے ہوئے آبادی کو متحرک کرنے کو یقینی بنائیں۔اعجاز اسد نے میونسپل حکام سے کہا کہ وہ تمام 35 ایس ایم سی وارڈوں میں نامزد گولڈن کارڈ رجسٹریشن کیمپ قائم کریں تاکہ لوگوں کی آسانی سے رسائی ممکن ہو سکے۔ انہوں نے ضلع میں راشن ڈپو، بینکوں کے احاطے اور مذہبی مقامات کے نزدیک خصوصی رجسٹریشن سائٹس کے قیام پر بھی زور دیا۔ایف سی ایس اینڈ سی اے کے تحصیل سپلائی افسروں سے کہا گیا کہ وہ راشن کارڈ ہولڈروں کو گولڈن کارڈ رکھنے کے فوائد کے بارے میں مطلع کریں اور انہیں ہدایت کی گئی کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ تمام راشن کارڈ ہولڈر اس سکیم کے تحت آتے ہیں۔ڈپٹی کمشنر نے سائٹس پر مناسب افرادی قوت (VLEs) کی موجودگی کو یقینی بنانے پر بھی زور دیا تاکہ صد فیصد ہدف حاصل کرنے کے لیے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے والوں کا اندراج کیا جا سکے۔اس اسکیم کے فوائد پر روشنی ڈالتے ہوئے ترقیاتی کمشنر نے کہا کہ اے بی پی ایم-جے صحت اسکیم حکومت کی جانب سے شروع کی گئی سب سے زیادہ فائدہ بخش اسکیموں میں سے ایک ہے جس کا مقصد فی خاندان 5 لاکھ روپے تک مفت یونیورسل ہیلتھ انشورنس کوریج فراہم کرنا ہے۔انہوں نے صحت اسکیم کے دائرہ کار کو بڑھانے کے لیے مربوط کوششوں پر زور دیا تاکہ ضلع سرینگر کے تمام اہل افراد مستفید ہوسکیں۔ڈپٹی کمشنر نے لائن ڈپارٹمنٹس کے افسران سے بھی کہا کہ وہ اس عمل کو تیز کریں اور مقررہ ٹائم لائن کے تحت 100 فیصد کوریج حاصل کریں۔میٹنگ کو بتایا گیا کہ ضلع سرینگر میں اب تک 443345 گولڈن کارڈ جاری کیے جا چکے ہیں اور اسکیم کے تحت رجسٹریشن کا عمل جاری ہے۔