سرینگر میں یرقان کے صرف3معاملات

سرینگر //سرینگر شہر کے چند علاقوں میں یرقان کی بیماری پھوٹنے کے بعد ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز کشمیر نے پانی کے نمونے حاصل کرکے تشخیص کیلئے بھیج دیئے ہیں ۔محکمہ صحت نے گرم پانی پینے اورصفائی و ستھرائی کا خیال رکھنے کی لوگوں کوہدایت دی ہے۔ حبہ کدل اور غدودباغ میں یرقان کی بیماری پھوٹنے کی افواہوں کے بیچ جمعہ کو ڈائریکٹوریٹ آف ہیلتھ سروسز کی خصوصی ٹیموں نے ان علاقوں کا دورہ کیا اور وہاں گھر گھر جاکر لوگوں کا معائنہ کیا۔ گھر گھر دورے کے دوران ٹیموں نے یرقان بیماری کے 3تین مریضوں کی نشاندی کی ۔ ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز کشمیر ڈاکٹر مشتاق احمد راتھر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’  تینوں یرقان متاثرین کا ایک دوسرے سے کوئی تعلق نہیں ہے‘‘۔ انہوں نے کہا’’ ٹیم نے مختلف علاقوں سے پانی کے نمونے حاصل کرکے تشخیص کیلئے روانہ کردیئے ہیں‘‘۔ انہوں نے کہا کہ چند لوگوں کی بیماری گندے پانی کے استعمال کی وجہ سے بھی ہوسکتی ہے اور اسلئے ہم نے پکھری بل واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ  اور اس پلانٹ سے پانی حاصل کرنے والے علاقوںسے نمونے حاصل کئے ہیں۔ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز نے کہا’’ فی الحال ہم نے تمام لوگوں کو گرم پانی پینے اور انہیں صاف و ستھرا رہنے کی بھی ہدایت دی ہے‘‘۔ ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز نے کہا’’ ہم نے جل شکتی محکمہ،میونسپلٹی، چیف سیکریٹری اور تمام لوگوں کو اس حوالے سے جانکاری دی ہے۔