سرحدی گولہ باری کے متاثرین مصائب کاشکار

 جموں//ریاست کے سابق وزیر اعلیٰ اور کانگریس کے سینئر لیڈر تارا چند نے آج پاکستانی گولہ باری سے متاثرہ سرحدی علاقوں کا دورہ کیااور صورت حال کا جائیزہ لیا۔اس دورے کے دوران انہوں نے ہمیر پور، گرار، ماگیال اور دیگر علاقوں میں گولہ باری سے ہوئے نقصانات اور لوگوں کو درپیش مشکلات کا جائیزہ لیااور متاثرہ لوگوں کے ساتھ بات چیت بھی کی۔سول آبادی کو نشانہ بنانے کے لئے تارا چند نے پاکستان کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔انہوں نے کہا کہ سرحد پار کی جانب کی جارہی بے تحاشہ گولہ باری سے بچنے کے لئے سرحدی علاقوں کے لوگ اپنا گھر بار اور مال واسباب چھوڑ کر اپنی جان بچانے کے لئے محفوظ مقامات کی تلاش میں در در کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں انہوں نے حکومت سے کہا کہ وہ ان لوگوں بنیادی سہولیات فراہم کرنے کے لئے فوری طور سے موثر قدم اٹھائے انہوں نے کہ سابقہ حکومت نے ان لوگوں کو محفوظ مقامات پر پلاٹ الاٹ کئے تھے مگر ان میں سے بہت سارے لوگ مالی تنگی کی وجہ سے مکان بنانے کی پوزیشن میں نہیں ہیں اس لئے ان لوگوں کو مالی معاونت کی ضرورت ہے۔انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ سرحدی علاقوںمیں پاکستانی فائرنگ سے زخمی ہوئے مال مویشیوں کے علاج کے لئے ڈاکٹروں کی ٹیمیں جلد روانہ کرے۔ اس کے علاوہ انہوں نے ایسے لوگوں جن کا مال میویشی مر گیا ہے ،کو معقول معاوضہ فراہم کرنے کی مانگ کی ۔ انہوں نے متاثرین کو کانگرس پارٹی کی طرف سے ہر ممکن امداد کا یقین دلایا۔
 

سوشل پیس فورم ٹیم کا سرحدی علاقوں کادورہ 

جموں//جموں کشمیرسوشل پیس فورم (حریت کانفرنس ۔جی اکائی) کی ٹیم نے آرایس پورہ اورارنیہ کادورہ کیا۔اس دوران ایڈوکیٹ دویندرسنگھ نے سرحدوں پرجنگ بندی کی خلاف ورزیوں کی وجہ سے ہوئے نقصانات کاجائزہ لیا اورسرحدی لوگوں جنھیں فائرنگ کی وجہ سے اپنے گھرچھوڑنے پڑے ہیں کی پریشانیوں کی جانکاری حاصل کی۔ یہاں جاری پریس بیان میں ایڈوکیٹ دویندرسنگھ نے مرکزی حکومت پرزوردیاکہ مذاکرات کاعمل شروع کرکے لوگوں کے مسائل کاازالہ کیاجائے۔انہوں نے کہاکہ سرحد ی علاقوں کے لوگوں کوگولہ باری کی وجہ سے بھاری نقصان ہواہے۔انہوں نے دونوں ممالک پرزوردیامسئلہ کشمیرکاحل یواین قراردادوں کے مطابق کیاجائے۔اس دوران ستیش کمار، جگدیش چند، راج کماربھگت، جسویرسنگھ ، چودھری اشرف، نوردین ،کلونت سنگھ ، کرنیل سنگھ ،جسویندرسنگھ ودیگران بھی دویندرسنگھ کے ہمراہ تھے۔