سرحدی مہاجرین کے مسائل

 راجوری //ڈپٹی کمشنر راجوری ڈاکٹر شاہدا قبال چوہدری نے سرحدی مہاجرین کے مسائل پر ایک میٹنگ منعقد کی جس دوران ان کو دی جارہی امداد اور ترقیاتی پروجیکٹوں کاجائزہ لیاگیا۔میٹنگ میں سندر بنی ، نوشہرہ ، ڈونگی ، منجاکوٹ اور دیگر علاقوں کے نمائندگان نے بھی شرکت کی ۔اس موقعہ پر ڈپٹی کمشنر نے بتایاکہ حکومت کی طرف سے 4918انفرادی اور 372کمیونٹی بنکروں کی تعمیر کو منظوری دی گئی ہے اور ابتدائی مرحلے میں 100بنکرزیر تعمیر ہیں ۔انہوںنے کہاکہ ان بنکرو ں کی تعمیر مقامی لوگوں ، انجینئروں ، فوج اور انتظامی سربراہان کی مشاورت سے طے شدہ لوازمات کے مطابق ہوگی ۔انہوںنے بتایاکہ ہر کمیونٹی بنکر 800سکوائر فٹ ہوگا جس میں 40افرا د قیام کرسکیںگے جبکہ انفرادی بنکر60سکوائر فٹ ہوگا جس میں 8افراد رہ سکیںگے ۔ ڈپٹی کمشنر نے بتایاکہ یہ پروجیکٹ 54ہزار آبادی کو محفوظ پناہ گاہ فراہم کرے گا۔دریں اثناء سرحدی مہاجرین کی امداد کیلئے سٹیٹ ڈیزاسٹر ریلیف فنڈ کے قواعد کے مطابق پرپوزل کو منظوری دی گئی جو ان کیلئے بڑی راحت کا باعث بنے گا۔ڈپٹی کمشنر نے بتایاکہ مہاجر کیمپوں میں رہ رہے سرحدی مکینوں کو اب ہرمہینے (بالغ )1800اور (بچے )کو 1325روپے بطور امدادملیںگے ۔انہوںنے مزید بتایاکہ فصلوں کے نقصان پر 37ہزار 500روپے فی ہیکٹر کے حساب سے معاوضہ کو منظوری دی گئی ہے جبکہ بڑے مویشیوں کے نقصان پر 30ہزار اور چھوٹے مویشیوں پر 3ہزار روپے بطور امدادمنظور ہوئی ہے ۔ انہوںنے کہاکہ تباہ ہوئے مکانات کو بھی اس امدادی دائرے میں لایاگیاہے ۔ انہوںنے بتایاکہ ضلع انتظامیہ نے ریلیف کیمپوں ، نقصان اور تباہی کیلئے 5.17کروڑ روپے کا پرپوزل تیار کیاہے ۔اس دوران سرحدی مہاجرین نے ضلع انتظامیہ کی ستائش کرتے ہوئے کہاکہ پہلی بار ان کے مسائل حل ہوتے دکھائی دے رہے ہیں ۔ اس موقعہ پر انتظامیہ کے افسران بھی موجود تھے ۔