سامیہ حسن تنزانیہ کی پہلی خاتون صدر بن گئیں

تنزانیہ کی نائب صدر سامیہ حسن ملک کی پہلی خاتون صدر بن گئیں۔61 سالہ سامیہ حسن صدر جان موگوفلی کی اچانک موت کے بعد ان کی باقی آئینی مدت تک صدارتی ذمہ داریاں ادا کریں گی جوکہ 2025 میں ختم ہوں گی۔اس سے قبل سامیہ حسن 2015 میں پہلی نائب صدر منتخب ہوکر بھی تاریخ رقم کرچکی ہیں۔تنزانیہ کے صدر جان مگوفلی اکسٹھ سال کی عمر میں2 ہفتے تک منظر سے غائب رہنے کے بعد گذشتہ روزانتقال کر گئے۔صدر مگوفولی کے کورونا وائرس کا شکار ہونے سے متعلق چہ مگوئیاں جاری تھیں کہ گزشتہ روز نائب صدر سمیہ صولوہو حسن نے ٹی وی پر خطاب کے دوران اْن کے انتقال کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ صدر عارضہ قلب میں مبتلا تھے۔ 2 ہفتے تک منظر سے غائب رہنے کے دوران ان کے حوالے سے کئی طرح سے دعوے کیے جا رہے تھے۔ اپوزیشن کی جانب سے گزشتہ ہفتے کہا گیا تھا کہ صدر جان مگوفولی کورونا کا شکار ہو گئے ہیں، تاہم اس بات کی کوئی تصدیق نہیں کی گئی تھی۔ صدر جان مگوفولی کو آخری بار 27 فروری کو عوامی سطح پر دیکھا گیا تھا۔