زیر حراست نوجوان کا گلا کاٹنے کی کوشش

 سرینگر//جنوبی کشمیر کے کوکر ناگ علاقے میں صدر اسپتال کے ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ نے بشری حقوق کے ریاستی کمیشن میںنوجوان حجام کو مبینہ طور پر دوران حراست حلق میں گہرے چوٹ سے متعلق طبی ریکار پیش کیا،جبکہ میڈیکل انسٹی چیوٹ صورہ اور صدر اسپتال کی طبی رپورٹوں میں اس بات کی بھی تصدیق کی گئی کہ فیروز احمد حجام کے رانوں اور بازو میں متعدد زخم تھے۔وادی کے جنوبی ضلع اننت ناگ(اسلام آباد) کے لارنو کرکر ناگ علاقے سے تعلق رکھنے والے فیروز احمد حجام کو کچھ روز قبل گرفتار کیا گیا تھا،جس کے بعد6ستمبر کو انہیں اسلام آباد کے ڈورو فوجی کیمپ (19آر آر)سے خون میں لت پت ضلع اسپتال منتقل کیا گیا۔فیروز احمد حجام کا گلہ کٹا ہوا تھا،اور اس کی حالت تشویشناک تھی۔ڈاکٹروں نے اس کی حالت کو دیکھ کر سرینگر کے صدر اسپتال منتقل کیا،جہاں پر وہ کئی دنوں تک موت وحیات کی کشمکش میں مبتلا رہے۔ اس دوران انٹرنیشنل فورم فار جسٹس کے چیئرمین محمد احسن اونتو نے17ستمبر کو واقعے سے متعلق ایک درخواست زیر نمبر SHRC/302ANG/2018  پیش کی،جس میں الزام عائد کیا گیا تھا ’’ حجام کو نزدیکی فوجی کیمپ میں طلب کیا گیا تھا،جہاں اس کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا اور اس کو کٹے ہوئے حلق کے ساتھ چھوڑ دیا گیا‘‘۔درخواست گزار نے بشری کمیشن کے تحقیقاتی شعبے سے اس واقعے کی تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس بات کی جانچ کی جائے کہ فیروز احمد کا گلہ کس طرح کٹا تھا۔ صدر اسپتال کے ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ نے بشری حقوق کے ریاستی کمیشن میں واقعے سے متعلق میڈیکل رپورٹ پیش کی۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انہوں نے فیروز احمد حجام کو تشویشناک حالت میں پا یا،جبکہ اس کا گلہ بری طرح سے کٹا ہوا تھا۔صدر اسپتال اور صورہ میڈیکل انسٹی چیوٹ سے کمیشن میں پیش کئے گئے طبی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فیروز احمد حجام کی دائیں بازو میں متعدد زخم تھے،جبکہ اس کے ران بھی زخمی تھے۔اس معاملے میں ابھی تک مفصل پولیس رپورٹ بشری حقوق کے ریاستی کمیشن میں پیش نہیں کی گئیہے۔پیشہ سے حجام فیروز احمد ولد غلام رسول کے بارے میں پولیس کا کہنا تھاکہ انہوں نے دوران پوچھ تاچھ اپنا حلق کاٹ کر خود کشی کرنے کی کوشش کی۔ پولیس کا کہنا تھا’’ فیروز جیش محمد کا ایک مشتبہ فرد ہے،جبکہ پوچھ تاچھ کے دوران وہ بیت الخلاء گیا،جہاں پر انہوں نے اپنا حلق کاٹ دیا‘‘تاہم بروقت پتہ چلنے پر پولیس نے اْسے نازک حالت میں اسپتال منتقل کیا ۔کیس کی ابتدائی سماعت کے دوران بشری حقوق کے ریاستی کمیشن کے چیئرمین جسٹس(ر) بلال نازکی نے ضلع ترقیاتی کمشنر اسلام آباد(اننت ناگ) اور ضلع پولیس چیف کے نام نوٹسیں جاری کرتے ہوئے انہیں واقعے سے متعلق مکمل رپورٹ،فوری طور پر کمیشن کے سامنے پیش کرنے کی ہدایت دی۔