زانگلی کپوارہ میں پینے کے پانی کی شدید قلت

کپوارہ// کپوارہ کے زانگلی علاقے میں پینے کے پانی کی شدید قلت پیدا ہوگئی ہے جس کے نتیجے میں مرد وزن نے کپوارہ لولاب سڑ ک پر محکمہ جل شکتی کے خلاف احتجاج کیا اور مطالبہ کیا کہ انہیں پانی کی بہتر سپلائی فراہم کی جائے ۔احتجاجیوں کا کہنا تھا کہ زانگلی علاقہ میں نصف آبادی کو واٹر سپلائی سکیم کے تحت پینے کا پانی فراہم ہوتا ہے جبکہ گائو ں کی نصب آبادی ابھی بھی پینے کے پانی سے محروم ہے۔احتجاج میں شامل لوگوں کا کہنا تھا کہ پینے کے صاف پانی کیلئے انہوں نے اپنے مکانو ں کے نزدیک کنوایں کھودے ہیں جن سے وہ پینے کا پانی حاصل کرتے تھے ،تاہم اب وہ کنویں بھی خشک ہو گئے جس کے باعث زانگلی میں پینے کے پانی کی شدید قلت پائی جارہی ہے ۔جمعہ کے روز زانگلی کے مردوزن لولاب کپوارہ سڑک پر اتر آئے اور پینے کے پانی کی عدم دستیابی کے خلاف زور دار احتجاج کیا جس کی وجہ سے گا ڑیو ں کی نقل و حمل بھی کئی گھنٹو ں تک متا ثر رہی ۔احتجاج کے بعد محکمہ جل شکتی کے ذمہ دار وہا ں پہنچ گئے اور احتجاج میں شامل لوگو ں کو یقین دلایا کہ وہ بہت جلد ان کا مسئلہ حل کریں گے اور لوگو ں کو پینے کا صاف پانی فراہم کیا جائے گا ۔ایگزیکٹیو انجینئر محکمہ جل شکتی فاروق سلطانی پوری نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ زانگلی علاقہ میں جس آ بادی کو پینے کا پانی میسر نہیں وہ آبادی وہاں کئی سال قبل آباد ہوئی ہے ،تاہم محکمہ کی یہ کوشش ہے کہ ہر گھر تک پینے کا صاف پانی پہنچے ۔انہو ں نے کہا کہ رواں سال محکمہ کو پائپوں کی کمی تھی تاہم اگلے چند روز میں زانگلی علاقہ میں جو آ باد ی پینے کے پانی سے محروم ہے ان کو پینے کا پانی فراہم کیا جائے گا ۔