ریڈ ونی کولگام میں نئے فوجی کیمپ کا قیام

 کولگام//کولگام کے ریڈونی بالا،ریڈ ونی پائین، کھڈونی ، کیموہ اور اس کے مضا فا ت میںنئے فوجی کیمپ کے قیام کے خلاف مکمل ہڑتا ل رہی اور لوگوں نے مظا ہرے کئے۔علاقے میں پر تشدد جھڑپیں بھی ہوئیں۔مقامی لوگوں کے مطابق دو روزقبل ریڈونی بالا میں فو ج نے ایک نیا کیمپ قائم کیا ۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ جہاںکیمپ قائم کیا گیا وہاںچنار وں کا ایک بڑا باغ ہے اور اس کو بلڈوزر لگاکر چناروں کے جڑوں کو ننگا کیا گیا اور کل ،معمولی ہوائیں چلنے سے چنار گر کرایک بڑا جانی نقصان کاسبب بن سکتے ہیں یہاں تک لوگوں کے درختان بھی کاٹے گئے۔انہوںنے کہا کہ فوجی کیمپ کے قیام سے مقامی لوگوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے کیونکہ کیمپ کے گردونواح متعدد رہائشی مکان ہیں اور اسکول موجود ہیں۔انہوںنے کہا علاقے کے چھ کلومیٹر دائرے میں تین کیمپ پہلے ہی موجود ہیں اور مزید فوجی جماو کئے جانے کی صورت میں انسانی حقوق کی صورتحال کے بگڑنے کا مسئلہ پیدا ہوسکتا ہے۔معلوم ہوا ہے کہ جمعہ کی شام ان پر پتھرائو کیا گیا ۔شام کے وقت ا سی نئے کیمپ سے وابستہ اہلکار گائوں میں گھس آئے اور انہوں نے گاڑیاں ،مکان، دیواراور جو کچھ بھی انکے راستے میں آیا توڑدیا۔انہوںنے گھر کے صحنوںاور سڑکوں پر کھڑی پچاس کے قریب گاڑیوں کو بھی تباہ کیا ۔ سنیچر کو کیمپ ہٹانے کا مطالبہ کو لیکر کھڈونی پل ، کواکی بازار، بدر پورہ بوڑ، یاری پورہ موڑ و پر مقامی نوجوانون ٹولیوں کی صورت میں جمع ہوئے اور فورسز پر پتھرائو کرنے لگے۔ نوجوانوں کو منتشر کرنے کیلئے فورسز نے آنسو گیس کے درجنوں گولے داغے جس سے علاقے میں جنگ جیسی صورتحال پیدا ہوئی اور لوگ اپنے گھروں میں ہی محدو ہوکر رہ گئے۔ اس صورتحال سے نہ صرف اننت ناگ کولگام روڑ پر دن بھر ٹریفک کی آواجاہی معطل رہی ۔