’ ریبیز وائرس ‘ جموں کشمیر میں قابل اطلاع بیماری قرار تمام مشتبہ، ممکنہ اور تصدیق شدہ کیسزکی نگرانی کیلئے سسٹم فوری طورنافذ العمل

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر//ایک اہم پیش رفت میں، جموں و کشمیر کی حکومت نے 1897 کے وبائی امراض ایکٹ کے تحت انسانی ریبیز کو قابل اطلاع بیماری قرار دیا ہے۔محکمہ صحت اور میڈیکل ایجوکیشن کی طرف سے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق، تمام سرکاری اور نجی صحت کی سہولیات بشمول میڈیکل کالجوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ انسانی ریبیز کے کسی بھی مشتبہ، ممکنہ اور تصدیق شدہ کیس کی اطلاع نیشنل ریبیز کنٹرول پروگرام کے متعلقہ چیف میڈیکل آفیسر اور اسٹیٹ نوڈل آفیسر کو دیں۔”ریبیز ایک شدید وائرل بیماری ہے جو انسانوں سمیت تمام گرم خون والے جانوروں کو متاثر کرتا ہے اور اس کی وجہ موت کی شرح بہت زیادہ ہونے والے جانوروں کے کاٹنے سے ہوتی ہے۔ ایشیا ء میں ریبیز سے ہونے والی اموات کا 59.9% اور عالمی سطح پر ہونے والی 35% اموات انڈیا میں ہوتی ہیں۔ تاہم، بروقت اور مناسب پوسٹ ایکسپوژر پروفیلیکسس (PEP) کے ذریعے ریبیز کو مکمل طور پر روکا جا سکتا ہے۔ 2023 تک انسانی ریبیز کی وجہ سے ہونے والی اموات کے ڈبلیو ایچ او کے ہدف کو حاصل کرنے کے لیے، یہ ضروری ہے کہ ایک مضبوط نگرانی اور ڈسکاس رپورٹنگ کا نظام قائم کیا جائے تاکہ بیماری کی درست شدت کا یقین کیا جا سکے۔ اس سے ریبیز کی روک تھام، کنٹرول اور خاتمے کے لیے علاقائی حالات کے مطابق حکمت عملی تیار کرنے میں مدد ملے گی۔ نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے”صحت اور خاندانی بہبود کے محکمہ حکومت ہند نے تمام ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے انسانی ریبیز کو قابل اطلاع بیماری بنانے کی درخواست کی ہے، اس طرح سب کے لیے لازمی قرار دیا گیا ہے۔ سرکاری اور نجی صحت کی سہولیات (بشمول میڈیکل کالج) تمام مشتبہ، ممکنہ اور تصدیق شدہ ہیومن ریبیز کیسز کی اطلاع ریبیز کے لیے ‘گائیڈنس دستاویز’ کے مطابق نیشنل ریبیز کنٹرول پروگرام (NRCP)، کو دی جائے،وزارت صحت اور خاندانی بہبود کی طرف سے وضع کردہ ایک قابل ذکر بیماریوں کے طور پر ایک ہی ذریعہ کے سامنے آنے والے دوسرے لوگوں میں انفیکشن کو روکنے کے لیے سراغ لگانا اور فوری طور پر حفاظتی تدابیر شامل ہے۔مزید کہا گیا ہے “لہٰذا، وبائی امراض ایکٹ، (1897) کا ایکٹ نمبر 3کے سیکشن 2 کے ذریعے عطا کردہ اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے، لیفٹیننٹ گورنر نے یہاں ‘ہیومن ریبیز’ کو ‘ جموں اور کشمیر کا مرکز کے زیر انتظام علاقہ میںقابل اطلاع بیماری’ قرار دیا ہے،” ۔”مزید برآں، تمام سرکاری اور نجی صحت کی سہولیات(بشمول میڈیکل کالجز) فوری طور پر ‘ہیومن ریبیز’ کے تمام مشتبہ، ممکنہ اور تصدیق شدہ کیسز کی رپورٹ متعلقہ ضلع کے چیف میڈیکل آفیسر کو دیں گے جس کی ایک نقل اسٹیٹ نوڈل آفیسر، نیشنل ریبیز کو دی جائے گی۔ یہ نوٹیفکیشن فوری طور پر نافذ العمل ہوگا اور اگلے احکامات تک کارآمد رہے گا۔