روہنگیاوبنگلہ دیشی شہریوں کوجموں بدرکرنے کامطالبہ

جموں//جموں کشمیرنیشنل پنتھرس پارٹی نے ریاست کی سرمائی راجدھانی جموں میں غیرقانونی طورپررہ رہے روہنگیااوربنگلہ دیشی شہریوں کوفوری طورپرجموں بدرکرنے کی مانگ کولے کراحتجاجی مظاہرہ کیا۔ اس دوران احتجاجی مظاہرے کی قیادت پارٹی کے چیئرمین اورسابق وزیر ہرش دیوسنگھ کررہے تھے۔گذشتہ روزپارٹی کے ایک درجن سے زائد کارکنان نمائش گراﺅنڈمیں جمع ہوئے اورغیرقانونی طورپررہ رہے روہنگیااوربنگلہ دیشی شہریوں کوجموں سے باہرنکالنے کی مانگ کواحتجاج کرنے لگے۔اس دوران مطاہرین نے مرکزی حکومت کویہ کہتے ہوئے ہدف تنقیدبنایاکہ ان غیرملکی شہریوں کومرکزی حکومت ریاست بدرکرنے میں ناکام ہوچکی ہے ۔مظاہرین نے ’چھوڑوہماراجموں پردیش ،روہنگیاس جاﺅبنگلہ دیش اوربنگلہ دیشیز گوبیک ‘نعرے بھی بلندکئے۔اس موقعہ پر مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے ہرش دیوسنگھ نے کہاکہ میانماراوربنگلہ دیش کے شہریوں کی غیرقانونی طورپرجموں اورگردونواح کے علاقوں میں رہنے میں تصدیق ہوچکی ہے اس لیے فوری طورپرانہیں جموں بدرکرنے کےلئے اقدامات اٹھائے جانے چاہیئے ۔انہوں نے کہاکہ صرف بیانات دینے سے کام نہیں چلے گا،عملی طورپر غیرملکی شہریوں کومرکزی حکومت کونکالنے کےلئے اقدامات اٹھانے چاہیئے ۔انہوں نے کہاکہ ڈوگروں کے صبرکاامتحان نہیں لیاناچاہیئے اورروہنگیااوربنگلہ دیشیوں کوفوری پرریاست بدرکرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہاکہ غیرقانونی سکونت رکھنے والے غیرملکوں سے اگریہاں سے نکالانہیں گیاتوجموں کے ڈوگروں اورغیرملکیوں کے درمیان تنازعات پیداہوں گے جس سے حالات خراب ہوسکتے ہیں۔پنتھرس پارٹی کے لیڈران نے کہاکہ کچھ مرکزی لیڈران صرف روایتی بیان بازی کرتے ہیں اورمیڈیامیں سرخیاں بٹورتے ہیں۔ ہرش دیوسنگھ نے کاکہ جموں میں نیشنل کانفرنس اورکانگریس کے دورمیں جموں میں روہنگیاﺅں اوربنگلہ دیشیوں کوغیرقانونی طورپربسایاگیااوراس کے بعدبی جے پی اورپی ڈی پی نے انہیں بہترسہولیات مہیاکرائیں جوکہ ڈوگروں کے خلاف ایک گہری سازش تھی۔انہوں نے دعویٰ کیاکہ یہاں میں روہنگیااوربنگلہ دیشیوں نے غیرقانونی طورپرجبراً نہ صرف جھونپڑیاں بنالی ہیں بلکہ پی آرسیز،آدھارکارڈ ،راشن کارڈ،مفت پانی اوربجلی کنکشن ،اورسرکاری سکولوں میں بچوں کے داخلے بھی کروانے میں کامیابی حاصل کررہی ہے۔انہوں نے کہاکہ مرکزی اورریاستی گورنرانتظامیہ کوفوری طورپراس معاملے کاسنجیدہ نوٹس لے کرپورے صوبہ جموں میں صورتحال کوکشیدہ بننے سے روکناچاہیئے۔انہوں نے کہاکہ غیرملکی شہریوں کاغیرقانونی طریقے سے یہاں پرآبادہونے سے نہ صرف جموں شہرکی ڈیموگرافی تبدیل ہورہی ہے بلکہ گردونواح کے علاقوں میں بھی کئی قسم کے خطرات لاحق ہوگئے ہیں اورجموں جرائم کامرکزبنتاجارہاہے ۔انہوں نے مزیدکہاکہ کچھ لوگ روہنگیائی اوربنگلہ دیشی شہریوں کووادی میں غلط مقاصدکےلئے استعمال کرنے کےلئے کوشاں ہیں۔