روہنگیائی اور بنگلہ دیشی مہاجرین

جموں//چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری جموں نے جموں میں ’غیر قانونی طور‘ مقیم روہنگیائی اور بنگلہ دیشی مہاجرین کے خلاف ’شناخت کرو اور قتل کرو‘“Identify and Kill Movement”مہم چلانے کا اعلان کیا ہے ۔ یہاں منعقدہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیمبر صدر راکیش گپتا نے الزام لگایا کہ بنگلہ دیشی اور روہنگیائی شہری منشیات فروشی اور دیگر جرائم میں ملوث ہیںاور ان کی بڑھتی تعداد کی وجہ سے جموں کے امن پسند شہری خود کو غیر محفوظ تصور کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کوئی بھی ریاست غیر قانونی مہاجرین کو پناہ دے کر اپنے شہریوں کی زندگی کو خطرہ میں نہیں ڈال سکتی۔ مرکزی اورریاستی سرکار کو روہنگیائی اور بنگلہ دیشی مہاجرین کو ریاست بدر کرنے کیلئے ایک ماہ کی مہلت دیتے ہوئے چیمبر صدر نے کہا کہ اگر اس اثنا میں حکومت ایسا کرنے میں ناکام رہتی ہے تو چیمبر کے پاس ایسے مہاجرین کو شناخت کرواور قتل کرومہم شروع کرنے کے علاوہ کوئی متبادل نہ ہوگا۔گپتا نے واضح الفاظ میں کہا کہ چیمبر محسوس کرتی ہے کہ غیر قانونی طور پر ریاست میں داخل ہونے والے ’جرائم پیشہ افراد ‘ کے ساتھ یہ سلوک کرنے میں کوئی قباحت نہیں ہے بالخصوص ایک ایسے وقت میں جب ریاستی شہریوں کو حالات کے تقاضا کے مطابق سیکورٹی فوسز کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر اپنی ذمہ داری نبھانی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ غیر ملکیوں کو جموں کشمیر میں بسانا ریاستی آئین کی کھلی خلاف ورزی ہے کیوں کہ ریاستی حکومت نہ تو اقوام متحدہ کی رکن ہے اور نہ ہی دفعہ 370کسی غیر ریاستی باشندے کو یہاں بسنے کا حق دیتی ہے ۔ چیمبر کے نائب صدور راجیش گپتاو راجیو گپتا، جنرل سیکرٹری منیش گپتا، سیکرٹی گورو گپتا وخزانچی آشو گپتا بھی پریس کانفرنس میں موجود تھے۔