روسی فوج میں بھرتی | ہندوستانیوں کو واپس لانے کیلئے مرکزی حکومت سرگرم

عظمیٰ نیوزسروس

نئی دہلی//مرکزی حکومت روسی فوج میں بھرتی کئے گئے ہندوستانی شہریوں کو واپس لانے کیلئے سرگرم ہوگئی ہے۔ہفتہ وار پریس بریفنگ میں،وزارت خارجہ کے ترجمان رندھیر جیسوال نے اعلان کیا،’’ہم نے روسی فوج کے ذریعے بھرتی کیے گئے ہندوستانیوں کی جلد رہائی اور وطن واپسی کا معاملہ روسی فریق کے ساتھ اٹھایا ہے۔ ہم نے بھرتیوں کو روکنے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔جیسوال نے کہا، “ہماری کوششوں کے نتیجے میں، اب تک 10 ہندوستانی شہریوں کو رہا کر کے وطن واپس لایا گیا ہے۔ ہم اس معاملے پر نئی دہلی اور ماسکو دونوں میں روسی فریق کے ساتھ رابطے میں ہیں۔ یہ ہمارے لیے انتہائی تشویشناک ہے اور ہم کارروائی کی توقع کرتے ہیں۔جاری تنازع میں اب تک چار ہندوستانی شہری مارے جا چکے ہیں۔ جیسوال نے ذکر کیا، “ہم حال ہی میں مرنے والے دو ہندوستانیوں کی لاشوں کی جلد منتقلی کے لئے روسی فریق کے ساتھ کام کر رہے ہیں۔ ہم ان کے اہل خانہ سے بھی رابطے میں ہیں۔روسی فوج کے ساتھ خدمات انجام دینے والے دو ہندوستانی شہری تقریبا دس دن پہلے روس-یوکرین تنازعہ میں مارے گئے تھے، جس سے ان ہلاکتوں کی کل تعداد چار ہو گئی ہے۔ ہندوستانی فریق نے روسی فوج کے ذریعہ ہندوستانی شہریوں کی مزید بھرتی کے لئے “تصدیق شدہ اسٹاپ” کا بھی مطالبہ کیا ہے۔ رپورٹس بتاتی ہیں کہ روسی فوج نے پچھلے سال سے 150-200 ہندوستانی شہریوں کو سپورٹ اسٹاف، جیسے باورچی اور مددگار کے طور پر کام کرنے کے لیے بھرتی کیا ہے۔ وزارت خارجہ اور ماسکو میں ہندوستانی سفارت خانے نے بالترتیب نئی دہلی میں روسی سفیر اور ماسکو میں روسی حکام کے ساتھ معاملے کو سختی سے اٹھایا ہے، تاکہ روسی فوج میں شامل تمام ہندوستانی شہریوں کی جلد از جلد رہائی اور واپسی ہو۔ وزارت خارجہ نے ہندوستانی شہریوں پر زور دیا ہے کہ وہ “روس میں روزگار کے مواقع تلاش کرتے ہوئے احتیاط برتیں۔ ہندوستانی فریق نے حالیہ مہینوں میں ماسکو پر دبا ڈالا ہے کہ وہ ایسے عہدوں پر خدمات انجام دینے والے تمام شہریوں کی واپسی کو یقینی بنائے۔ مزید برآں، 20-25 ہندوستانیوں نے گھر واپسی کے لیے معاون عملے کے طور پر اپنی ملازمتوں سے رہائی کے لیے مدد مانگی ہے۔بہت سے ہندوستانی شہریوں کو ہندوستانی شہروں اور دبئی میں مقیم ایجنٹوں کو بھرتی کرکے سپورٹ اسٹاف کی ملازمتیں لینے کا جھانسہ دیا گیا ہے۔ چار اموات کے علاوہ کئی ہندوستانی زخمی ہوئے ہیں۔ روسی فوج کے ساتھ ملازمتوں سے نکلنے کے لیے ہندوستانیوں کی مدد کے لیے سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ویڈیوز بھی منظر عام پر آئی ہیں۔سنٹرل بیورو آف انویسٹی گیشن نے حال ہی میں کئی ریاستوں میں پھیلے ہوئے انسانی اسمگلنگ کے نیٹ ورک کا پردہ فاش کیا۔ اس نیٹ ورک نے سوشل میڈیا چینلز اور ایجنٹوں کے ذریعے نوجوانوں کو روس میں اعلی معاوضے کی نوکریوں کے وعدے کے ذریعے راغب کیا۔