راجیہ سبھا میں خواتین ریزرویشن کا مطالبہ گونج اٹھا

نئی دہلی//راجیہ سبھا میں آج سبھی پارٹیوں کے اراکین نے پارلیمنٹ اور اسمبلیوں میں خواتین اراکین کو 33فیصدریزرویشن دئے جانے کے لئے قانون بنانے کا مطالبہ کیا۔خواتین اراکین نے وقفہ صفر کے دوران اس مسئلے کو اٹھاتے ہوئے کہا کہ نو سال پہلے راجیہ سبھا میں اس سلسلے میں ایک بل پاس کیاگیا تھا لیکن اس کے بعد سیاسی پارٹیوں میں اتفاق نہ ہونے کی وجہ سے اسے لوک سبھا میں پاس نہیں کیا جاسکا۔سماجوادی پارٹی کی جیا بچن نے کہا کہ ان کی پارٹی خواتین کو ریزرویشن دئے جانے کے خلاف نہیں ہے ۔لیکن اس بل کو موجودہ شکل میں پاس کئے جانے سے اس کا سب سے زیادہ فائدہ شہری اور امیر طبقے کی خواتین کو ہوگا۔ان کی پارٹی دلت اور پسماندہ طبقے کی 33فیصد خواتین کو ریزرویشن کا فائدہ دئے جانے کے حق میں ہے ۔انہوں نے کہا کہ آنے والے وقت میں لوک سبھا اور راجیہ سبھا میں سماجوادی پارٹی میں خواتین کی تعداد بڑھے گی۔تیلگودیشم پارٹی کی ٹی مہالکشمی نے خواتین کو ریزرویشن دئے جانے کے مطالبے کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ان کی پارٹی پوری طرح سے اس کے حق میں ہے ۔ترنمول کانگریس کی شانتی چھیتری نے کہا کہ ان کی پارٹی میں 35فیصد خواتین اراکین ہیں ۔ان کی پارٹی نے لوک سبھا انتخابات میں 35فیصد خواتین کو ٹکٹ دیا تھا۔مارکسی کمیونسٹ پارٹی کی جھرنا داس وید نے کہا کہ لوک سبھا کے 543اراکین میں سے صرف 11.5فیصد خواتین رکن ہیں جبکہ راجیہ سبھا میں یہ 12.2فیصد ہیں۔انہوں نے کہا کہ ریزرویشن کے بغیر خواتین کے مطالبات پورے نہیں ہوسکتے ۔اے آئی اے ڈی ایم کے کی وجولا ستیاناتھن نے کہا کہ ان کی پارٹی خواتین کو 33فیصد ریزرویشن دیتی ہے ۔ڈی ایم کے کی کنی موجھی نے کہا کہ خواتین کے ساتھ امیتازی سلوک بند کرنے کے فیصلے کی حکمت عملی میں انہیں شامل کیا جانا چاہئے ۔کانگریس کی وپلو ٹھاکر نے خواتین کو 33فیصد ریزرویشن دینے کے مطالبے کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ اس سے اس انہیں خودمختار بنایا جائے گا۔جنتادل یو کی کہکشاں پروین نے کہا کہ بہار میں بلدیاتی اور پنچایتی انتخابات میں 50فیصدر ریزرویشن کا التزام ہے ۔اس کے ساتھ ہی ٹیچروں کی تقرری میں بھی ریزرویشن دیاگیا ہے ۔بھارتیہ جنتا پارٹی کی سمپتیا اوئیکے نے کہا کہ ان کی پارٹی میں خواتین کو 35فیصد ریزرویشن دیا جاتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ مودی حکومت نے خواتین کو احترام سے نوازا ہے ۔ابتدا میں چیئرمین ایم وینکئیا نائیڈو نے کہا کہ ریزرویشن پر بحث کرانے کے لئے خواتین اراکین نے نوٹس دیا تھا اور اس سلسلے میں ان لوگوں نے ان سے مل کر بھی بات کی تھی جس کی وجہ سے وہ وقفہ صفر میں اس مسئلے پر بحث کرانے کی اجازت دے رہے ہیں۔یواین آئی۔