راجہ نذر بونیاری نہ رہے! آنے والی نسلوں کے لئے متاثرکُن ورثہ چھوڑ گئے

فیاض بخاری

ادب، امن کی وکالت اور سماجی ایکٹوزم کے چراغ، راجہ عبدالقیوم خان جو’’راجہ نذر بونیاری‘‘کے نام سے مشہور تھے، طویل علالت کے بعد 20 فروری 2024 کو ممبئی کے ایک ہسپتال میں75 برس کے عمر میںوفات پاگئے۔ اُن کا انتقال اُردو اور پہاڑی ادب کےلئے ایک دور کے خاتمے کی علامت ہے، جو اپنے پیچھے ایک ایسا ورثہ چھوڑ گیا ہے جو آنے والی نسلوں کو متاثر کرتا رہے گا۔ نذر بونیاری بارہمولہ ضلع کے ترکانجن بونیار کے خوبصورت گاؤں میں2 جنوری 1949 میںپیدا ہوئے اور پرورش پائی، راجہ نذر نے اپنی بنیادی تعلیم اپنے گائو ں ترکانجن میں حاصل کی۔ لکھنے کے فطری جذبے سے متاثر، نذربونیاری نے اپنے بیچلر کورس کے لیے 1973 میں گورنمنٹ ڈگری کالج بارہمولہ میں شمولیت سے قبل لکھنا شروع کیا۔ انہوںنے مقامی طور پر اپنے تعلیمی حصول کا آغاز کیا، بالآخر کشمیر یونیورسٹی سے اردو میں ماسٹرز اور B.Ed کی ڈگری حاصل کی، اس طرح تعلیم میں ایک ممتاز کیریئر کی بنیاد رکھی۔ بطور معلم اپنی 43 سال کی خدمات کے دوران، راجہ نذر خان نے شمالی کشمیر کے تعلیمی شعبے کے منظر نامے پر اَنمٹ نقوش چھوڑے اور 2007 میں گورنمنٹ ہائی اسکول ترکاجن کے ہیڈ ماسٹر کے طور پر ریٹائر ہوئے۔ ان کی لگن اور مختلف تعلیمی اداروں بشمول DIET اور ان کے لیے خدمات، جموں و کشمیر کے بورڈ آف اسکول ایجوکیشن نے نوجوان ذہنوں کی پرورش کےلئے اپنے غیر متزلزل عزم کی مثال دی۔ تاہم، یہ ادب کے دائرے میں تھا کہ راجہ نذر حقیقی معنوں میں چمکا۔ پہاڑی اور اردو دونوں زبانوں میں اپنی 14 سے زیادہ شائع شدہ تصانیف کے ساتھ انہوں نے اپنے بصیرت افروز نثر اور پُرجوش شاعری سے قارئین کو مسحور کیا۔

 

ان کی ادبی صلاحیتوں کو بین الاقوامی سطح پر پذیرائی ملی، ان کے کالموں کے تراجم کشمیر کی حدود سے باہر کے سامعین تک پہنچے۔ راجہ نذر کی ادبی کوششیں صرف تحریری الفاظ تک محدود نہیں تھیں۔ انہوں نے ڈی ڈی کوشُر اور ریڈیو کشمیر سری نگر جیسے پلیٹ فارمز پر اینکر اور گلوکار کے طور پر خدمات انجام دیتے ہوئے ایئر ویوز کو اپنی آواز دی۔ اپنی ادبی خدمات کے علاوہ، راجہ نذر پہاڑی زبان کے تحفظ اور ترویج کےلئے ایک مضبوط وکیل تھے۔ تعلیمی اداروں کے اندر اور میڈیا کے ذریعے پہاڑی کے مقام کو بلند کرنے کےلئے ان کی انتھک کوششوں کا خوب اعتراف کیا جاتا ہے۔1970 میں انہوں نے روزنامہ چنار میں ایڈیٹر کا کردار بھی سنبھالا، جہاں انہوں نے اپنے دور میں نمایاں خدمات انجام دیں۔ ان کے بصیرت انگیز اردو مضامین نے دہلی کے ترقی پسند مصنفین کی توجہ مبذول کرائی، جس سے انہیں وسیع پیمانے پر پذیرائی ملی۔ اپنی لسانی استعداد کا مظاہرہ کرتے ہوئے، راجہ نذر کا ادبی ذخیرہ جموں و کشمیر میں بولی جانے والی نو زبانوں میں پھیلا ہوا ہے۔ ان کی اردو کتاب بعنوان ’’دل نامہ‘‘ اپریل 2020 میں شائع ہوئی، جس میں ان کی ادبی صلاحیتوں کو ظاہر کیا گیا اور قارئین سے داد وصول کی۔ مزید برآں ان کا کام متنوع اصناف تک پھیل گیا، ان کی اردو کتاب ’’شاردا چوٹی ‘‘(سفر نامہ)گزشتہ سال شائع ہوئی اور عالمی سطح پر پذیرائی حاصل کی۔ ان کی دیگر شائع شدہ تصانیف میں ’’بنجما کا بیٹا‘‘،’’یہ کس کی لاش ہے میرے کفن میں‘‘، ’’نمل‘‘،’’مٹھی نیچ‘‘،’’لیلال دے بنجارے‘‘، اور ’’سیرت تل نعمان‘‘ قابل ذکر ہیں۔ ایک قابل اور ورسٹائل مصنف کے طور پر ان کی میراث۔ راجہ نذر بونیاری کی میراث ادب کے دائروں سے باہر ہے۔ وہ امن کی علامت اور سرحد پار ثقافتی تبادلے کے پرجوش وکیل تھے۔ ان کا مظفرآباد کا اکثر سفر منقسم برادریوں کے درمیان خلیج کو ختم کرنے اور ادب کی عالمی زبان کے ذریعے افہام و تفہیم کو فروغ دینے کے ان کے عزم کا ثبوت ہے۔ اپنے اردگرد کی دنیا کے ایک گہری مبصر کے طور پرراجہ نذر محض اپنے خیالات کو قلم بند کرنے سے مطمئن نہیں تھا۔ وہ سماجی سرگرمیوں میں بھی گہرا مشغول تھا۔ اس کی گہری نظر تھی کہ ان مسائل کو حل کرنے کے قابل ہوں، چاہے وہ ادب، ثقافت یا سماجی انصاف سے متعلق ہوں۔ اپنی برادری اور اپنے ملک کے لیے ان کی لگن اٹل تھی۔ ایک سماجی کارکن کے طور پر اپنے کردار میں راجہ نذر نے ہندوستان اور پاکستان کے درمیان امن اور تعاون کی وکالت میں اہم کردار ادا کیا۔ ثقافتی اور ادبی تنظیموں کے ساتھی نمائندوں کے ساتھ اس نے سرحد پار وفود میں متنوع آوازوں کو شامل کرنے کے لیے انتھک لابنگ کی، باہمی افہام و تفہیم اور مفاہمت کو فروغ دینے کے لیے اس طرح کے تبادلوں کی صلاحیت کو تسلیم کیا۔اپنے اعمال اور الفاظ کے ذریعےراجہ نذر بونیاری نے ہمدردی اور اتحاد کے جذبے کو مجسم کیا۔ اس کی میراث ادب کی تبدیلی کی طاقت اور گہرے اثرات کی یاد دہانی کے طور پر کام کرتی ہے جو افراد تقسیم کے پار پل بنانے میں پڑ سکتے ہیں۔ جیسا کہ ہم ان کے انتقال پر تعزیت کرتے ہیں، آئیے ہم ان کی امن، افہام و تفہیم اور خیر سگالی کی پائیدار میراث کا بھی جشن مناتے ہیں۔ ان کے انتقال میں، ہم ایک ایسے نور کو الوداع کرتے ہیں جس کے الفاظ حد سے گزر گئے اور جن کے اعمال نے ان تمام لوگوں کے دل و دماغ پر انمٹ نقوش چھوڑے، جنہیں اس کے ساتھ راستے عبور کرنے کی سعادت حاصل تھی۔ اگر چہ راجہ نذر بونیاری اس دارِ فانی سے کوچ کر چکے ہیں،لیکن ان کی میراث آنے والی نسلوں کو متاثر کرتی رہے گی۔
(مضمون نگار کشمیر عظمیٰ کے نامہ نگار برائے ضلع بارہمولہ ہیں)
رابطہ ۔: 9858900055
[email protected]