راجوری پونچھ میں کووڈ لاک ڈاﺅن نافذ کر دیا گیا

 راجوری//گزشتہ روز جموں وکشمیر انتظامیہ کی جانب سے جاری شدہ حکم نامے کے عین مطابق راجوری اور پونچھ اضلاع کے علاقوں میں ہفتے کے آخر میں لاک ڈاو¿ن نافذ کیا گیااور دونوں اضلاع کے ضلع مجسٹریٹوں نے اپنے دائرہ اختیار میں لاک ڈاو¿ن کے احکامات جاری کئے ہیں۔جمعہ کے روز دیر شام کے اوقات میں جموں و کشمیر حکومت نے ہفتے کے آخر میں کرفیو نافذ کرنے کا حکم دیتے ہوئے پیر کی صبح 06 بجے تک ہر قسم کی غیر ضروری نقل و حرکت پر پابندی لگا دی۔جڑواں اضلاع کے ڈسٹرکٹ مجسٹریٹس نے جمعہ کی شام سے پیر کی صبح تک ہر ویک اینڈکےلئے اپنے دائرہ اختیار میں ہر قسم کی غیر ضروری نقل و حرکت پر پابندی عائد کرتے ہوئے باضابطہ احکامات جاری کئے ہیں۔راجوری اور پونچھ اضلاع میں ہفتے کے آخر میں پابندیاں ہفتے کی سہ پہر کو نافذ کی گئی تھیں اور پولیس کی ٹیموں کو علاقوں میں اعلان کرتے ہوئے دیکھا گیا تھا کہ وہ لوگوں سے گھروں سے باہر نہ نکلیں اور پابندیوں کی پابندی کریں۔غیر ضروری نوعیت کے تمام کاروباری اداروں کو بھی پولیس نے بند کر دیا۔مینڈھر قصبہ میں پولیس نے تجارتی مراکز بند کرواتے ہوئے کہاکہ پیر تک مذکورہ سر گرمیاں بند رکھی جائیں ۔انہوں نے کہاکہ اس دوران صرف ضروری سہولیات دستیاب رکھنے والی دکانیں ہی کھلی رہیں گی ۔دونوں سرحدی اضلاع میں انتظامیہ نے لوگوں کو ہدایت جاری کرتے ہوئے کہاکہ وہ پابندیوں پر سختی کےساتھ عمل کریں ۔
 
 

پیر پنچال میں کووڈ کے 69معاملات ریکارڈ 

سمت بھارگو
راجوری//راجوری اور پونچھ اضلاع میں ہفتہ کے روز کورونا وائرس کے 69نئے معاملات ریکار ڈ کئے گئے ہیں ۔نئے سامنے آنے والے معاملات میں زیادہ مقامی افراد شامل ہیں ۔سرکاری اعداد و شمار کے مطابق، پونچھ ضلع میں ہفتہ کے روز 35 نئے کوویڈ 19 کیس درج کئے گئے جن میں 28 مقامی اور 07 مسافر تھے۔ضلع میں اس وقت کل فعال کیسوں کی تعداد 236 تک پہنچ گئی ہے۔دریں اثنا، راجوری میں ہفتہ کے روز رپورٹ ہونے والے کورونا وائرس کے 34 کیسوں میں سے سبھی مقامی ہیں جبکہ بار سے ضلع میں داخل ہونے والے کسی بھی مسافروں میں سے وائرس کے ہونے کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔
 

لاک ڈاﺅن سے عام زندگی متاثر 

عشرت حسین بٹ
منڈی//تحصیل منڈی میں بھی ہفتہ وار لاک ڈاﺅن کے نفاذ کی وجہ سے عام لوگوں کی زندگی متاثر ہو کر رہ گئی۔ سنیچر کو تحصیل انتظامیہ کی جانب سے پولیس کے ذریعہ منڈی بازا میںلاک ڈاﺅن کے حوالے سے اعلان کیا گیا اور دکانداروں کو ان کی دکانیں بند کرنے کے احکامات صادرکئے ۔پولیس نے لوگوں کو ہدایت جاری کرتے ہوئے کہاکہ وہ اپنے گھروں میں رہیں اور غیر ضروری طورپر کھلے عام نہ آئیں ۔انہوں نے کہاکہ ضروری اشیاءبالخصوص سبزیاں ودیگر ساز و سامان کی دکانیں کھلی رہیں گی ۔لاک ڈاﺅن کے پہلے دن عام زندگی متاثر رہی جبکہ قصبہ میں خریداری کے سلسلہ میں آئے ہوئے لوگوں کو بھی خالی ہاتھ ہی واپس جانا پڑا ۔
 

کووڈ پابندیوں کے چلتے ریلیف پیکیج دینے کا مطالبہ 

جاوید اقبال 
مینڈھر //کووڈ کی تیسری لہر میں اضافے پر قابو پانے میں حکومت ہند اور جموں و کشمیر یونین ٹیریٹری انتظامیہ کی حساسیت اور ردعمل کی تعریف کرتے ہوئے جموں اور کشمیر بارڈر ایریا ڈیولپمنٹ کانفرنس کے چیئر مین اور سابقہ وائس چانسلر ڈاکٹر شہزاد ملک نے کہا ہے کہ لوگوں کی مشکلا ت کو دیکھتے ہوئے ریلیف پیکیج دیا جائے تاکہ غریبوں کو اس نازک وقت میں بنیادی سہولیات دستیاب ہو سکیں ۔یہاں جاری بیان میں موصوف نے کہاکہ مکینوں کی فلاح و بہبود کےلئے نئی کوویڈ پابندیاں، بشمول اختتام ہفتہ کے دوران غیر ضروری نقل و حرکت کو روکنا، جموں و کشمیر حکومت کی طرف سے جاری کردہ حکم وقت کی ضرورت ہے اور ہر سمجھدار شخص اس کی حمایت کرے گا۔موصوف نے لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ وہ حکومت کے مذکورہ قدم کی حمایت کریں تاکہ کووڈ کے پھیلاﺅ کو کم کیا جاسکے ۔انہوں نے کہا کہ یہ مناسب ہوگا کہ حکومت بغیر کسی تاخیر کے کووڈ کی تیسری لہر کے جواب میں خصوصی ریلیف پیکج کا اعلان کرے اور سرکاری یومیہ اجرت پر کام کرنے والوں، پرائیویٹ اساتذہ، ڈرائیوروں اور کلینرز کے اہل خانہ کو بھی اس اسکیم میں شامل کرے۔ڈاکٹر شہزاد نے حکومت سے یہ بھی درخواست کی کہ صارفین کو سرکاری راشن کی فراہمی کےلئے بائیو میٹرک کی لازمی شرط کو ختم کیا جائے ۔