راجوری ، پونچھ میں بارش کے کئی دن کسانوں کیلئے ضروری راحت لے آئے | گندم کی فصل بڑھنے لگی، کسان مزید بارش کیلئے دعا گو گندم کی پیداوار 20 فیصد تک متاثر ہوگی، پھلوں کی پیداوار متاثر نہیں ہوگی: کے وی کے راجوری

سمت بھارگو

راجوری // راجوری اور پونچھ اضلاع کے علاقوں میں بارش کے کئی دنوں کے بعد، کسانوں کو فصل کی بہتر پیداوار کی امید کے ساتھ راحت کی آہٹ محسوس ہو رہی ہے تاہم وہ آنے والے دنوں میں مزید بارش کی دعا کر رہے ہیں تاکہ کھیتوں میں پانی کی کمی ہو جائے۔کرشی وگیان کیندر (کے وی کے) کے زرعی سائنسدانوں کو یہ خدشہ ہے کہ فصل کی پیداوار خاص طور پر گندم کی فصل کی پیداوار اب بھی تقریباً بیس فیصد تک متاثر رہے گی۔راجوری اور پونچھ ضلع، جسے پیرپنجال خطہ کہا جاتا ہے ، بارشوں کی کمی کی وجہ سے تقریباً ڈھائی ماہ تک خشک موسم کا مشاہدہ کرتا رہا جس کی وجہ سے ماحول میں شدید خشکی پیدا ہونے کے علاوہ زمین کے پانی کی سطح میں کمی آئی، آبی ذخائر میں پانی کا بہاؤ کم ہو گیا جبکہ چھوٹے پودے پیلے ہونے لگے۔خشکی اور بارش کی کمی کا سب سے زیادہ اثر گندم کی فصل پر دیکھا گیا جو ابتدائی بڑھنے کے عرصے میں تھیں لیکن بارش نہ ہونے کی وجہ سے اس کا اثر دیکھا گیا۔تاہم، گزشتہ دو ہفتوں میں بارش کے کئی دنوں نے کسانوں کو راحت کی صورتحال میں ڈال دیا ہے جن کا خیال ہے کہ آنے والے دنوں میں حالات کچھ بہتر ہوں گے۔راجوری سے تعلق رکھنے والے ایک کسان مشتاق حسین نے کہا”ہم نے پچھلے ڈھائی مہینوں میں شدید خشک موسم کا سامنا کیا جس نے سب کو متاثر کیا لیکن ہم (کسان) اس کی وجہ سے تناؤ کی حالت میں تھے‘‘۔ مشتاق حسین نے کہا کہ راجوری کے زیادہ تر علاقے صرف بارش پر منحصر ہیں اور انسانوں کی طرف سے آبپاشی کی سہولیات بہت محدود ہیں۔مشتاق نے کہا”ہم بہت پریشان تھے کیونکہ ہماری گندم کی فصل مر رہی تھی اور درختوں کے پتے پیلے ہو رہے تھے اور یہاں تک کہ جنگل کے بستروں نے بھی پیلے رنگ کی خشکی پہن رکھی تھی جو پہلے شاید ہی دیکھی گئی تھی‘‘۔اسی طرح ایک اور کسان کمل شرما، جس کا گندم کا کھیت ہے، نے بتایا کہ اس کے کھیت میں گندم کی فصل کے پودے نہیں بڑھ رہے تھے اور ان کی نشوونما نہیں ہو رہی تھی لیکن اب حالات بہتر ہو رہے ہیں کیونکہ گزشتہ چند دنوں میں ہونے والی بارش نے پانی کی ضرورت سے زیادہ مقدار فراہم کر دی ہے ۔تاہم انہوں نے کہا کہ تمام کسان ابھی بھی مستقبل قریب میں مزید بارش کے دنوں کی دعا کر رہے ہیں تاکہ حالیہ خشک موسم میں پانی کی کمی پر قابو پایا جا سکے۔زرعی سائنسدان اور سربراہ کرشی وگیان کیندر راجوری ، ڈاکٹر اروند کے ایشر نے کہا کہ حالات میں قدرے بہتری آئی ہے لیکن اس بات کا شاید ہی کوئی امکان ہے کہ سارا نقصان پلٹا جائے۔اپنی بات چیت میں ڈاکٹر اروند نے کہا کہ خشک موسم اور گزشتہ ڈھائی مہینوں میں بارش کی کمی نے زمین میں پانی کی شدید قلت پیدا کر دی ہے اور گندم کی فصل کی نشوونما رک گئی ہے۔ڈاکٹر اروند نے کہا”اگرچہ گندم کی فصل کی نشوونما معمول کی رفتار سے شروع ہو گئی ہے لیکن اس کا کافی اثر رہے گا‘‘۔زرعی سائنسدان نے مزید کہا کہ اس سال تقریباً بیس فیصد فصل کی پیداوار متاثر رہے گی۔پھل دینے والی فصل کی پیداوار کے بارے میں، ڈاکٹر ارویندر کے ایشر نے کہا کہ پھلوں کی فصل کے متاثر ہونے کا تقریباً کوئی امکان نہیں ہے کیونکہ پھلوں کے پودوں کے کھلنے کی مدت فروری، مارچ کی مدت میں شروع ہوتی ہے اور اب بارش شروع ہو چکی ہے۔