راجناتھ سنگھ کی فورسز کو ہدایات،ہر پاکستانی گولی کا کرارا جواب دیا جائے

نئی دہلی // مر کزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے کہا ہے کہ  حد متارکہ اور بین الاقوامی سرحد پر تعینات فوج اور بی ایس ایف کو اس کے لئے کھلی چھوٹ دی گئی ہے کہ وہ پاکستان کی جانب سے چلائی جانے والی ہر گولی کا کرارا جواب دیں ۔راجناتھ سنگھ نے سرحد پر جاری گولہ باری پرتبصرہ کر تے ہوئے کہا کہ پڑوسی ملک پاکستان کی جانب سے کی جانے والی گولہ باری کا فورسز کو بھر پور جواب دینے کا حق ہے ۔انہوں نے کہا کہ سرحد پر تعینات فورسز کو اس حوالے سے حکومت کی جانب سے پوری آزادی حاصل ہے کہ وہ پاکستان کی کسی بھی جارحیت کا بھر پور اور منہ توڈ جواب دیں ۔ راجناتھ سنگھ نے یہاں بارڈر سکیورٹی فورس کے افسران اور جوانوں کی اعزازی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان نے پاکستان کے ساتھ معمول کے تعلقات بنانے کی ہر کوشش کی ہے لیکن پڑوسی ملک اپنے ہتھکنڈوں سے باز نہیں آ رہا ہے اور سلامتی دستہ کو اس کی ہر کارروائی کا مناسب جواب دینا چاہئے۔انہوں نے کہا کہ ملک کی سرحدوں کی حفاظت کرنا بارڈر سکیورٹی فورس کی ذمہ داری ہے اور اس ذمہ داری کو پورا کرنے میں کوئی رکاوٹ یا سرحد آڑے نہیں آ سکتی۔انہوں نے کہا کہ جوابی کارروائی پر کسی سے کوئی سوال جواب نہیں ہو سکتا۔ انہوں نے کہا کہ ’’پاکستان کی اس پینترے بازی کی وجہ کیا ہے یہ سمجھنا مشکل ہے۔ یہ ریسرچ کا موضوع ہو سکتا ہے لیکن وہ اپنی حرکتوں سے باز نہیں آتا۔ پہلے گولی تو پڑوسی پر نہیں چلنی چاہئے لیکن اگر ادھر سے چل جاتی ہے تو کیا کرنا ہے اس کا فیصلہ آپ کو کرنا ہے‘‘۔قابل ذکر ہے کہ پاکستانی رینجرس گزشتہ کچھ دنوں سے سانبہ جموں اور ارنئہ علاقوں میں سرحدی حفاظتی دستوں کی چوکیوں پر شدید فائرنگ کر رہے ہیں۔ پاکستان کی جانب سے سرحد کے رہائشی علاقوں کو بھی نشانہ بنایا جا رہا ہے جس سے جان و مال کا نقصان ہو رہا ہے۔اس دوران مرکزی وزیر جتیندر سنگھ نے کہا کہ پاکستان اپنی حرکتوں سے باز نہیں آیا۔سنگھ نے کہا کہ قرآن کریم کے اصولوں پر مبنی ایک نظام قائم کرنے کے لئے پاکستان قائم کیا گیا تھا۔ تاہم، اس نے اپنے اعلان کردہ مقاصد کو غلط ثابت کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ پوری دنیا دیکھے کہ روزہ رکھنے کے دوران ہر مسلمان کے دوسرے انسان کو نقصان پہنچانے پر روک ہے لیکن ایک اسلامی مملکت ہے جس نے تشدد کرنے اور لوگوں کا قتل کرنے میں کچھ بھی غلط نہیں پایا۔