راجناتھ سنگھ کا چین کو سخت پیغام | کوئی چھیڑے تو ہندوستان نہیں چھوڑے گا

یو این آئی
واشنگٹن//چین کو سخت پیغام دیتے ہوئے وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے کہا کہ اگر ہندوستان کو کسی نے نقصان پہنچایا تو وہ بھی بخشے گا نہیں۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے زور دیا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں ہندوستان ایک طاقتور ملک کے طور پر ابھرا ہے اور دنیا کی ٹاپ تین معیشت میں سے ایک بننے کی طرف گامزن ہے۔راجناتھ سنگھ نے سین فرانسسکو میں ہندوستانی امریکی برادری کو مخاطب کرتے ہوئے امریکہ کو ایک لطیف پیغام بھی دیا کہ ہندوستان ‘زیرو سم گیم’ کی ڈپلومیسی پر یقین نہیں رکھتا اور کسی ایک ملک کے ساتھ اس کے تعلقات دوسرے ملک کی قیمت پر نہیں ہو سکتے۔ ’زیرو سم گیم‘ اس حالت کو کہا جاتا ہے جس میں ایک فریق کو ہوئے نقصان کے برابر دوسرے فریق کو فائدہ ہوتا ہے۔وزیر دفاع ہندوستان اور امریکہ کے درمیان واشنگٹن ڈی سی میں منعقد ’ٹو پلس ٹو‘ وزارتی مذاکرات میں شرکت کے لئے یہاں آئے تھے۔ اس کے بعد، انہوں نے ہوائی اور پھر فوجی فرانسسکو کا سفر کیا۔ راجناتھ سنگھ نے جمعرات کو سین فرانسسکو میں ہندوستانی قونصلیٹ کی جانب سے اپنے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے چین کے ساتھ سرحد پر ہندوستانی فوجیوں کی جانب سے دکھائی گئی بہادری کا ذکر کیا۔وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے کہا، ’میں کھلے طور پر یہ نہیں کہہ سکتا کہ انہوں نے (ہندوستانی فوجیوں نے) کیا کیا اور ہم نے (حکومت نے) کیا فیصلے لئے، لیکن میں یقینی طور پر کہہ سکتا ہوں کہ (چین کو) ایک پیغام گیا ہے کہ ہندوستان کو اگر کوئی چھیڑے گا تو ہندوستان چھوڑے گا نہیں‘۔پینگونگ جھیل علاقے میں پْرتشدد جھڑپ کے بعد پانچ مئی، 2020 کو ہندوستانی اور چینی افواج کے درمیان سرحدی تعطل شروع ہوگیا تھا۔ 15 جون، 2020 کو گلوان وادی میں ہوئے جھڑپ کے بعد تعطل مزید بڑھ گیا۔ ان جھڑپوں میں 20 ہندوستانی فوجی ہلاک ہوگئے تھے۔ حالانکہ چین نے اس سے متعلق کوئی باضابطہ تفصیل نہیں دی۔