راجناتھ اور محبوبہ مفتی کی میٹنگ ،ایجنڈا آف الائنس کا تبادلہ خیال,وزیر اعظم پیکیج کا جائزہ,80ہزار کروڑ پیکیج میں62ہزار کروڑ روپے واگزار کئے گئے

سرینگر//مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ ،جو کہ ریاست کے 4 روزہ دورے پر ہیں ، نے وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کے ہمراہ وزیر اعظم ترقیاتی پیکج کی عمل آوری کا یہاں ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ میں جائیزہ لیا ۔اس سے قبل دونوں لیڈروں نے ایک گھنٹے تک میٹنگ کی۔سرینگر آتے ہی مرکزی داخلہ وزیر نے وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کے ساتھ علیحدہ میٹنگ کی ۔ دورانِ میٹنگ دونوں رہنماؤں نے ریاست کی کلہم صورتحال ، اتحاد کے ایجنڈا اور ریاست میں وزیر اعظم ترقیاتی پیکج کی عمل آوری پر تبادلہ خیال کیا ۔ وزیر اعلیٰ نے ریاست میں سماج کے تمام طبقوں جنہیں ایجنڈا آف الائنس میں باقاعدہ طور تسلیم کیا گیا ہے ، تک پہنچنے کی ضرورت پر زور دیا ۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کے عوام کی ضروریات و مسائل کی اتحادی ایجنڈا میں نشاندہی کی گئی ہے اور اس کی عمل آوری میں سرعت لانے کی از حد ضرورت ہے ۔ دونوں نے اتحادی ایجنڈا کی بروقت تکمیل کی ضرورت کو تسلیم کیا جس میں ریاست کو  درپیش مسائل کے حل کیلئے واضح نقشہ راہ فراہم کیا گیا ہے ۔ محبوبہ مفتی نے وزیر اعظم ترقیاتی پیکیج کے تحت مختلف پروجیکٹوں کیلئے رقومات کی باقاعدہ اور بروقت واگذاری کی بھی درخواست کی ۔ اس کے بعد اعلیٰ سطحی میٹنگ  میںدونوں رہنماؤں نے ریاست میں پی ایم ڈی پی کے تحت ہاتھ میں لئے گئے پروجیکٹوں کا تفصیلی جائیزہ لیا ۔ راجناتھ سنگھ نے ریاست اور مرکزی حکومت کے افسران کو وزیر اعظم ترقیاتی پروگرام کی بروقت عمل آوری کیلئے آپس میں قریبی تال میل قائم کرنے کیلئے کہا ۔ انہوں نے کہا کہ پی ایم ڈی پی کی عمل آوری سے ریاست میں ترقیاتی اور بنیادی ڈھانچہ میں انقلابی تبدیلی واقع ہو گی ۔ انہوں نے کہا کہ یہ پروگرام ریاست کیلئے اب تک کا سب سے بڑا مالی پیکیج ہے ۔ انہوںنے افسران کو معین مدت کے اندر ہی پروجیکٹوں کی تکمیل یقینی بنانے کی ہدایت دی تا کہ لوگ ان پروجیکٹوں سے استفادہ کر سکیں ۔ اس موقعہ پر وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے ان پروجیکٹوں کی عمل آوری کیلئے ریاستی حکومت کے حق میں رقومات کی بروقت اور باقاعدہ واگذاری طلب کی ۔ انہوں نے کہا کہ کام کاج کے مختصر سیزن اور سخت سردی کے باعث رقومات کی واگذاری میں سرعت لانے کی اشد ضرورت ہے ۔ نائب وزیر اعلیٰ ڈاکٹر نرمل سنگھ بھی میٹنگ میں موجود تھے ۔ چیف سیکرٹری بی بی ویاس اور مرکزی وزیر داخلہ کے او ایس ڈی امریندرا کمار سینگر نے میٹنگ کو 80 ہزار کروڑ روپے کے وزیر اعظم ترقیاتی پروجیکٹ کے تحت ہاتھ میں لئے گئے مختلف زمروں کے پروجیکٹوں کے بارے میں تفصیل دی ۔ میٹنگ کو بتایا گیا کہ 15 مرکزی وزارتوں کے ذریعے پی ایم ڈی پی کے تحت 63 پروجیکٹ ہاتھ میں لئے گئے ہیں جن کی عمل آوری کیلئے 39  تعمیری ایجنسیوں کو متعین کیا گیا ہے ۔ میٹنگ میں مزید بتایا گیا کہ  ان پروجیکٹوں میں سے قریبا 80 فیصد پروجیکٹوں کو باقاعدہ منظوری حاصل ہوئی ہے ۔ میٹنگ میں بتایا گیا کہ پیکیج کے تحت مختص کی گئی رقم میں سے 21988 کروڑ روپے اب تک واگذار کئے گئے ہیں اور 5 پروجیکٹ پہلے ہی پروگرام کے تحت مکمل ہو چکے ہیں جبکہ 7 پروجیکٹ تکمیل کے قریب ہیں ۔ میٹنگ میں مزید بتایا گیا کہ زیر تعمیر پروجیکٹوں میں سے 22 سڑک پروجیکٹ شامل ہیں جن میں سرینگر اور جموں کیلئے نیم دائرہ سڑک پروجیکٹ ، کرگل ۔ زانسکار سڑک ، اودھمپور ۔ رام بن ۔بانہال  کی سڑک کے حصے تکمیل کے مختلف مراحل میں ہیں ۔ میٹنگ کو مطلع کیا گیا کہ جموں میں آئی آئی ایم نے عارضی اکامت میں کام شروع کیا ہے جبکہ نار کرہ بڈگام میں بھی ادارے کے کیمپس  میں کام شروع ہوا ہے ۔ اسی طرح آئی آئی ٹی جموں نے بھی جموں میں کام شروع کیا ہے اور ان دونوں اداروں کیلئے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کا کام شروع کیا گیا ہے جبکہ اے ایم آر یو ٹی کے تحت 59 پروجیکٹوں میں سے 56 پروجیکٹوں کے مفصل پروجیکٹ رپورٹ منظور کئے گئے ہیں جن میں 27 پروجیکٹوں پر کام شروع ہو چکا ہے ۔ حمایت پروگرام کے تحت ریاست میں آنے والے پانچ برسوں کے اندر ایک لاکھ نوجوانوں کو تربیت فراہم کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے جن کیلئے روز گار کی فراہمی کیلئے  تجارتی اداروں کے ساتھ رابطہ قایم کیا گیا ہے اور 10 ضلع صدر مقامات پر انڈور سٹیڈیم تعمیر کئے جا رہے ہیں ۔ عمل آوری کیلئے اٹھائے جا رہے 11 پروجیکٹوں میں چند اہم پروجیکٹ بشمول 5100 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر ہونے والے جموں ۔ اکھنور ۔ پونچھ سڑک پروجیکٹ ،1800 کروڑ روپے کا سرینگر ۔ شوپیاں ۔ قاضی گنڈ سڑک پروجیکٹ اور مختلف سیاحتی منازل کیلئے 2700 کروڑ روپے کی مالیت کا 105 کلو میٹر طویل سڑک پروجیکٹ شامل ہیں ۔ مرکزی سیکرٹری داخلہ گوبے ، ایڈیشنل سیکرٹری داخلہ بی آر شرما اور ریاستی انتظامیہ کے انتظامی سیکرٹری میٹنگ میں موجود تھے ۔