رائیار خانصاحب کا اندوہناک سانحہ صاف پانی زندگی ہے تو آلودہ پانی موت ہے

زہرالنساء

ایک ایسی دنیا میں جو تکنیکی معجزات کا اعلان کرتی ہے اور ترقی میں چھلانگ لگاتی ہے، بڈگام ضلع کے خانصاحب سب دویژن کے رائیار سانحے کی خوفناک بازگشت ایک واضح یاد دہانی کے طور پر کام کرتی ہے کہ پینے کا صاف پانی بہت سوں کیلئے ایک دور کا خواب ہے۔ جیسے جیسے تعداد بڑھ رہی ہے، ہیپاٹائٹس اے کے نو تصدیق شدہ کیسزکے ساتھ، ترقی کی داستان غیر محفوظ پانی کی سنگین حقیقت اور اس کے تباہ کن نتائج سے ٹکرا رہی ہے۔

بڈگام سانحہ :۔بہت سے لوگ دودھ پتھری کی ندیوں کی قسم کھائیں گے۔بہتر سڑکوں کی عدم موجودگی میں گھاس کے میدانوں تک برسوں تک رسائی مشکل رہی تاہم اب یہ بات زبان زد ہر خاص و عام ہے کہ اب یہ ایک اہم سیاحتی مقام بن گیاہے جہاں تل دھرنے کی جگہ نہیںہوتی۔ لوگوں کی بے پناہ آمدسے جنگلات اور آبی ذخائر پر اثرات اب واضح ہیں۔

دود ھ پتھری خطے کی گود میں پڑنے والے دیہی علاقوں کا سکون حال ہی میںمایوسی کی گہرائیوں میں ڈوبا ہوا پایاگیا۔ آلودہ پانی کی وجہ سے یرقان کی تشخیص کے بعد 10 سالہ بچے کی موت نے کمیونٹی میں صدمے کی لہر بھیج دی۔یہ دل دہلا دینے والا واقعہ کوئی تنہا کیس نہیں تھا۔ یہ پانی سے پیدا ہونے والی بیماریوں کے سلسلے کا ایک پْرجوش تمہید تھا جو خطے کو اپنی لپیٹ میں لے رہی ہے اور جاری رکھے گی۔

ہیپاٹائٹس اے کا پھیلاؤ:۔ بڈگام میں پانی سے پیدا ہونے والی بیماری ہیپاٹائٹس اے کے نو کیسوں کی تصدیق نے اُن لوگوں کے خطرات کو اجاگر کیا جو پینے کے صاف پانی تک رسائی سے محروم ہیں۔ انفیکشن آلودہ پانی کے استعمال سے ہوتا ہے۔ ہیپاٹائٹس اے، جس میں یرقان، بخار اور پیٹ میں درد ہوتا ہے، وہیں پروان چڑھتا ہے جہاں پانی کا معیار خراب ہوتا ہے۔ اس طرح کے وباء کی موجودگی ایک ایسی قوم میں پانی سے متعلق چیلنجوں سے نمٹنے کی فوری ضرورت کو واضح کرتی ہے جو جامع ترقی کی خواہش رکھتی ہے۔

واٹر سپلائی سکیمیں بمقابلہ پانی کا بحران:۔پانی کی فراہمی کی موجودہ سکیموں اور پانی کے مسلسل بحران کے درمیان تضاد ایک پریشان کن معمہ ہے جس سے ہندوستان دوچار ہے۔ برسوں کے دوران، حکومت نے پانی کی رسائی اور معیار کو بہتر بنانے کے لیے متعدد اقدامات اور منصوبے شروع کیے ہیں۔ اس کے باوجود، بڈگام کا سانحہ ایک ظالمانہ یاد دہانی کا کام کرتا ہے کہ ان کوششوں کے باوجود پینے کا صاف پانی بہت سوں کیلئے ایک عیش و آرام کی چیز ہے۔ بڑا سوال یہ ہے کہ ان نیک نیتی کے منصوبوں کے درمیان، آلودہ پانی کا بھوت ہم پرکیوں منڈلا رہا ہے؟

پانی کی پریشانیوں کا پیچیدہ جال:۔واٹر سپلائی سکیم سے گھریلو نل تک کا سفر ایک پیچیدہ عمل ہے، جو چیلنجوں سے بھرا ہے۔ بنیادی ڈھانچے کے خسارے، غیر موثر دیکھ بھال، اور پانی کے معیار کی دیکھ بھال کے بارے میں بیداری کی کمی اکثر راستے میں خلل ڈالتی ہے۔ مزید برآں پانی کواُبال کر صاف کرنے کا معاشی بوجھ، جس کیلئے ایندھن کی ضرورت ہوتی ہے، ان لوگوں کی حالت زار کو مزید پیچیدہ بنادیتا ہے جو پہلے ہی غربت سے دوچار ہیں۔

دیہی آبادیاں:۔ہندوستان کے ہلچل سے بھرے شہری مراکز میں، چمکتی ہوئی فلک بوس عمارتوں اور پانی کی فراہمی کے موثر نظام کا نظارہ اکثر ملک کی پانی کی صورت حال کی ایک نامکمل تصویر پیش کرتا ہے۔ ستم ظریفی یہ ہے کہ اس طرح کے جدید عجائبات کے درمیان بھی دور دراز دیہات اور پسماندہ طبقات پانی سے پیدا ہونے والی بیماریوں کا شکار ہیں۔ شہری مراکز اور دیہی علاقوں کے درمیان واضح تفاوت ترقی کی بکھری نوعیت کی نشاندہی کرتا ہے۔

پانی اور آلودگی:جیسے کرنی ویسے بھرنی:۔ہمارے آبی ذرائع کو کنٹرول کرنا محض سہولت کا معاملہ نہیں ہے۔ یہ ایک اہم ذمہ داری ہے جو ہماری صحت اور تندرستی کی حفاظت کر سکتی ہے۔ پانی کے ذرائع کو صاف ستھرا رکھنے کی ضرورت پرانی کہاوت کے ساتھ گونجتی ہے “جیسی کرنی ،ویسی بھرنی” ہم جن آلودگیوں کوہماری آبی گزرگاہوں میںداخل کرنے کی اجازت دیتے ہیں ،وہ پینے کے آلودہ پانی کی شکل میں ہمارے پاس واپس آتی ہیں، جس سے پانی سے پیدا ہونے والی بیماریاں جنم لیتی ہیں جو ہماری زندگیوں اور طبقات کو خطرہ بناتی ہیں۔ اپنے آبی ذرائع کی صفائی کو برقرار رکھنے میں اپنے کردار کو تسلیم کرکے، ہم بیماریوں کے چکر کو توڑ سکتے ہیں اور اپنے اور آنے والی نسلوں کیلئے محفوظ ماحول کو یقینی بنا سکتے ہیں۔ اس ذمہ داری کو قبول کرنا نہ صرف ایک عملی قدم ہے بلکہ ہمارے مشترکہ وسائل کو محفوظ رکھنے اور ایک صحت مند، زیادہ پائیدار دنیا کو فروغ دینے کیلئے ایک اخلاقی فرض ہے۔

ناخوشگوار سچ:۔کشمیر بھر میں پانی سے پیدا ہونے والی بیماریوں کے حالیہ واقعات ہمارے اجتماعی شعور میں ایک دردناک حقیقت کو نقش کر رہے ہیں اور وہ حقیقت یہ ہے کہ ترقی کو صرف معاشی اشاریوں اور تکنیکی ترقی سے نہیں ماپا جا سکتا۔ کسی ملک کی حقیقی ترقی اس کے شہریوں کی فلاح و بہبود سے ظاہر ہوتی ہے، خاص طور پر ان کی بنیادی ضروریات تک رسائی جیسے پینے کے صاف پانی تک رسائی۔ ہیپاٹائٹس اے کا پھیلنا پانی سے پیدا ہونے والی بیماری کے بحران سے نمٹنے کی فوری ضرورت پر مزید زور دیتا ہے ۔

چونکہ ہم وعدے اور خطرے کے اس دوراہے پر کھڑے ہیں، یہ تسلیم کرنا ضروری ہے کہ پانی، جو زندگی کو برقرار رکھتا ہے، اسے کبھی بھی موت اور مصیبت لانے کی اجازت نہیں دی جانی چاہئے۔ پینے کے صاف پانی کو یقینی بنانے میں ہماری ناکامیوں کا شکار ہونے والا بچہ ایک سنجیدہ یاد دہانی ہے کہ ہم نے جو قدم اٹھایا ہے اس کے باوجود پینے کے صاف پانی کا سفر ابھی ختم نہیں ہوا ہے۔

اس کا حل صرف بنیادی ڈھانچے کی ترقی میں نہیں ہے، بلکہ جامع پالیسی کے نفاذ، کمیونٹی کی شمولیت، اور اس بات کو یقینی بنانے کیلئے ایک غیر متزلزل عزم ہے کہ صاف پانی ہر شہری کیلئے لازمی حق بن جائے، چاہے وہ کہیں بھی رہائش پذیر ہوں یا ان کی معاشی حیثیت کیسی بھی ہو۔جبھی ہم اس المناک تضاد کے طوق سے آزاد ہو کر ایک ایسے مستقبل کی طرف بڑھ سکتے ہیں جہاں پینے کا صاف پانی کوئی دور کا خواب نہیں بلکہ ایک حقیقت بن سکتاہے۔

(نوٹ۔ اس مضمون میں ظاہر کی گئی آراء مضمون نگار کی خالصتاً اپنی آراء ہیں اور انہیں کسی بھی طور کشمیر عظمیٰ سے منسوب نہیں کیاجاناچاہئے۔)