دہلی میںپانی کابحران | سپریم کورٹ نے دہلی اور ہماچل حکومتوں کی سرزنش کی

یو این آئی

نئی دہلی// سپریم کورٹ نے بدھ کو دہلی اور ہماچل پردیش حکومتوں کی قومی راجدھانی میں پانی کے بحران پر سماعت کے دوران مبینہ طور پر لاپرواہی کا مظاہرہ کرنے کے لئے سرزنش کی سپریم کورٹ نے کہا کہ دہلی حکومت ‘ٹینکر مافیا’ پر قابو پانے میں ناکام رہی ہے، جس کی وجہ سے قومی راجدھانی میں پانی کا بحران ہے جو شدید گرمی سے لڑ رہا ہے عدالت دہلی پولیس سے اس معاملے میں ایف آئی آر درج کرنے کو کہہ سکتی ہے۔جسٹس پرشانت کمار مشرا اور جسٹس پرسنا بی ورالے کی تعطیلاتی بنچ نے یہ مشاہدات کیے اور دہلی حکومت کو پانی کی کمی پر قابو پانے کے لیے کیے گئے اقدامات کے بارے میں حلف نامہ داخل کرنے کی ہدایت دی جب کہ 6 جون کو پانی کی فراہمی سے متعلق اپنے حکم کی تعمیل پر غور کیا گیا۔ ۔بنچ نے ہماچل پردیش حکومت کو پہلے 137 کیوسک اضافی پانی کی دستیابی کا دعوی کرنے اور بعد میں یہ کہہ دینا کہ بیراج میں پانی پہلے ہی بہہ چکا ہے، ناراضگی ظاہر کی ۔جسٹس مشرا کی سربراہی والی بنچ نے ہماچل پردیش کے ایڈوکیٹ جنرل کو بتایا “ہم نے پہلے دیے گئے بیان کی بنیاد پر حکم پاس کیا۔ ہم براہ راست افسر (اس معاملے میں متعلقہ افسر ) کو جیل بھیج دیں گے۔” بنچ نے ہماچل پردیش کے وکیل سے پوچھا کہ اگر آپ پہلے ہی پانی چھوڑ رہے ہیں اور یہ ہماچل پردیش سے آرہا ہے تو پھر جھوٹا بیان کیوں دیا جا رہا ہے۔سپریم کورٹ نے دہلی حکومت کی طرف سے پیش ہونے والے سینئر وکیل ابھیشیک منو سنگھوی سے پوچھا “آپ نے پانی پینے اور نگلنے والے ٹینکر مافیا کے خلاف کیا قدم اٹھایا؟