درہ نالے پرپانچ برسوں سے پل تعمیر نہ ہو سکا

 تھنہ منڈی // سب ڈویژن تھنہ منڈی کے پسماندہ گائوں درہ میں محکمہ دیہی ترقی کی جانب سے زیر تعمیر دو پلیاں گزشتہ پانچ برسوں سے تشنہ تکمیل ہیںجس کے نتیجے میں ہزاروں نفوس پر مشتمل کئی دیہات کی آبادی کو دریا عبور کرنے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ مکینوں کے مطابق پانچ سال گزرنے کے باوجود نامعلوم وجوہات کی بناء پر اس نالہ پر زیر تعمیر دو پلیوں کو آج تک مکمل نہیں کیا جا سکا۔ اس سلسلے میں گاؤں کے کئی باشندوں نے روزنامہ کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اس سلسلے میں متعدد مرتبہ متعلقہ محکمہ سے رجوع کیا گیا لیکن بدقسمتی سے نامعلوم وجوہات کی بنا پر تاحال اس سلسلے میں کوئی پیشرفت نہیں ہوئی ہے جو کہ انتہائی افسوس ناک بات ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ خاص کر برسات کے موسم میں انھیں دریا عبور کرنے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے علاوہ ازیں کئی مرتبہ جانی اور مالی نقصان بھی اٹھانا پڑتا ہے تاہم عرصہ دراز گزرنے کے باوجود ان پلیوں کو قابل آمد و رفت نہیں بنایا گیا جس کے سبب لوگوں کو دقتوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ قابلِ ذکر ہے کہ کائیں والی ، اڑانگی اور نیڑیاں ڈھوک کے بالائی علاقوں سے نکلنے والا یہ نالہ درہ گائوں کو دو برابر حصوں میں تقسیم کرتا ہوا قصبہ تھنہ منڈی کی طرف بہتا ہے جس پر زیر تعمیر دو پلیوں کے تعمیراتی کام کو عرصہ پانچ سالوں سے ادھورا چھوڑ کر یہاں کے باشندوں کو مشکلات میں ڈالا ہوا ہے اور انھیں نہ کردہ گناہ کی سزا دی جا رہی ہے اور انتظامیہ کسی بڑے حادثے کی منتظر محو تماشا بنی ہوئی ہے۔ اس سلسلے میں موضع درہ اور اس سے ملحقہ کئی دیہات کے عوام نے ایک مرتبہ پھر ضلع ترقیاتی کمشنر اور گورنر انتظامیہ سے ان پلیوں کا ادھورا کام فوری طور مکمل کرنے کی مانگ کی ہے تاکہ عوام کو مزید مشکلات سے دوچار نہ ہونا پڑے۔