دبئی کے عالمی مشاعرہ: ڈاکٹر لیاقت جعفری ریاست جموں کشمیر کی نمائندگی کریں گے

 جموں//ریاست کے جواں سال ادیب اوراردو شاعر ڈاکٹر لیاقت جعفری آئندہ دنوں میں دبئی اورکویت جیسے خلیجی ممالک میں ایک بار پھر ریاست اور ملک کی نمائندگی کرنے کے لئے مدعوکئے گئے ہیں۔ ان مشاعروں میں وہ وسیم بریلوی راحت اندوری منور رانا عباس تابش منظر بھوپالی نواز دیوبندی حسیب امبر سوز اور شارق کیفی جیسے مشہور ہندوستانی اور پاکستانی شاعروں کے ساتھ اسٹیج کی رونق بڑھائیں گے لیاقت جعفری کم و بیش ہر مہینے ملک کے کسی نہ کسی کل ہند مشاعرے، اردو سیمینار یا کانفرنس میں مدعورہتے ہیں لیکن اب کچھ سالوں سے وہ لگاتارعالمی مشاعروں میں بھی اپنی شرکت سے ریاست کا نام عالمی پیمانوں پر بلند کرنے میں مصروف ہیں جدید لہجے کی تازہ دم غزل اور پروفیشنل مشاعریکے حوالے سے ادبی دنیا میں اپنا ایک الگ مقام بنا چکے ڈاکٹر جعفری اس سے پہلے رواں سال کے آغاز میں ہی متحدہ عرب امارات میں قایم ہندوستانی سفارت خانے کی دعوت پرخلیج کے مختلف شہروں ریاض، دمام، جبیل، جدہ، مدینہ وغیرہ مشاعرے پڑھ چکے ہیں، اس کے علاوہ اسی سال وہ دوحہ قطر کے عالمی مشاعرے میں بھی ہندوستان کی جانب سے شرکت کر چکے ہیں..ماضی میں بھی ایک ہندوستانی ثقافتی ڈیلیگیشن کا حصّہ بن کر پاکستان جا چکے ہیں.. ماہ اکتوبر میں انھیں کویت کا سفرکرنا ہے اور اگلے سال کے آغاز میں پاکستان کے کچھ مشاعروں میں ان کی شرکت متوقع ہے لیاقت جعفری ریاست کی تاریخ کے غالباً پہلے شاعر ہیں جو اتنے بڑے پیمانے پر منعقد ہونے والے عالمی مشاعروں کا اس تواتر سے حصّہ بن رہے ہیں، ڈاکٹر جعفری سال بھرہندوستان میں کل ہند سطح کے متعدد سیمیناروں، کانفرنسوں مشاعروں میں شرکت کرتے ہی رہتے ہیں… قریباً آدھ درجن کتابوں کے مصنف اورکچھ صحافتی رسالوں کے مدیر لیاقت جعفری اردو ادب کے علاوہ تھیٹر،ٹی وی، صحافت اور فلم سے بھی وابستہ ہیں اسی سال ان کی گوناگوں ادبی ثقافتی اورصحافتی خدمات کے لئے مشہورلالہ جگت نارائن قومی ایوارڈ سے نوازا گیا تھا.. جعفری ریاستی حکومت کی طرف سے میں اردو زبان کی ترویج و ترقی کیلئے تشکیل دی گئی ریاستی سطح کی اردو کمیٹی کے پانچ سال سے زائد عرصہ تک کنوینئر بھی رہ چکے ہیں، حالیہ دنوں میں ریاست میں قایم ہوئی اردو کونسل کی تشکیل میں ان کے فعال رول کی بھی ادبی حلقوں میں خوب پذیرائی ہوئی ہے،اس وقت وہ ریاست کے علاوہ ملک کی کچھ دیگر نمائندہ اوراہم ادبی تنظیموں کا حصّہ بھی ہیں.. پونچھ سے تعلق رکھنے والے لیاقت جعفری محکمہ اعلی تعلیم میں پروفیسر ہیں اور اس وقت وومنز کالج گاندھی نگر جموں میں اردو شعبے کے حوالے سے اپنے تدریسی فرائض انجام دے رہے ہیں. لیاقت جعفری ابھی تک قریب سو سے زاید کل ہند مشاعروں میں شرکت کر چکے ہیں اور موجودہ وقت کے تمام صف اول کے شاعروں بشیربدر، ندا فاضلی، شہریار،وسیم بریلوی،راحت اندوری، منور رانا، جاوید اختر، گلزار، عبّاس تابش وغیرہ کے ساتھ اسٹیج کا حصّہ بن چکے ہیں اس وقت ڈاکٹر لیاقت جعفری بالی وڈ کے ساتھ بھی جڑے ہوئے ہیں، فلم انڈسٹری کے چند بڑے پروجیکٹوں کے ساتھ ان کا نام منسوب ہے، وہ آئندہ دنوں میں ریلیز ہونے والی کئی اہم فلموں کیلئے نغمے لکھ چکے ہیں اور ٹی-سیریز، زی میوزک اور سونی میوزک جیسے موسیقی کے بڑے برینڈز کے ساتھ کام کر رہے ہیں .. لیاقت جعفری کا تعلق ادبی حوالوں سے زرخیز پونچھ خطہ سے ہے، پونچھ پہلے ہی سے کرشن چندر اور چراغ حسن حسرت جیسے اردو ادب کے شاہکار ادیبوں کے شہر کے طور پہ مشہور ہے، لیاقت جعفری اسی سلسلے کی اگلی کڑی کے طور پہ ادبی حلقوں میں قبولا جا رہا ہے۔