خواتین کی بااختیاری میں نیشنل کانفرنس کارول کلیدی رول:ڈاکٹر فاروق

سرینگر//دورِ حاضر میں ہر ایک شعبے میں خواتین کا کلیدی رول ہے اور ہر سطح پر خواتین کی بااختیاری وقت کی اہم ضروت ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ نیشنل کانفرنس نے ہی سب سے پہلے خواتین کے رول کی اہمیت اور افادیت کو سمجھا اور سماج کے ہر طبقہ کی خواتین کی بااختیاری اور حقوق کیلئے جدوجہد کی۔ ان باتوں کا اظہار نیشنل کانفرنس  صدرڈاکٹر فاروق عبداللہ نے پارٹی ہیڈکوارٹر پر ضلع شوپیان کی خواتین ونگ کے نومنتخب عہدیداران کے یک روزہ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ موجودہ دور میں ہر ایک شعبے میں خواتین کا رول انتہائی اہمیت کا حامل ہے اور یہ اہمیت ہر گزرتے دن کیساتھ بڑھتی جارہی ہے۔ سیاست میں بھی خواتین کا اہم رول ہے اور نیشنل کانفرنس کی خواتین ونگ پارٹی کے ایک اہم ستون کی حیثیت رکھتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب ملک اور برصغیر میں خواتین کی بااختیاری کا تصور بھی نہیں تھا اُس وقت مادر مہربان کی قیادت میں نیشنل کانفرنس خواتین کی بااختیاری کیلئے تاریخی اور انقلابی اقدامات کررہی تھی۔ یہ نیشنل کانفرنس ہی تھی جس نے خواتین کی بااختیاری کیلئے پنچایتی راج میں 33فیصد ریزرویشن سے لیکر میڈیکل سیٹوں میں 50فیصد کوٹا تک کے تاریخی اور انقلابی اقدامات کئے۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر اس وقت دگرگوں حالات سے دوچار ہے اور لوگوں کی اقتصادی و معیشی حالت انتہائی ناگفتہ بہہ ہے اور یہ منفی صورتحال یہاں کی خواتین کیلئے ایک چیلنج ہے۔