خلائی ریسرچ، کالونائزیشن اور عالم اسلام | قسط۔۱ کئی مسلم ممالک ان میدانوں میں مختلف طریقوں سے مشغول

مسعود محبوب خان

• ’’اور زمین اور آسمانوں میں جو کچھ ہے، سب میں غور و فکر کرو۔’’ (سورۃ یونس: 101)
خلائی تحقیق اور کالونائزیشن جدید دور کے دو اہم موضوعات ہیں۔ یہ موضوعات علمی،ٹیکنالوجی اور تجارتی ترقی کو فروغ دینے میں اپنا رول ادا کرتے ہیں جو تیزی سے بدلتی ہوئی دنیا میں اہمیت اختیار کر رہے ہیں۔ عالم اسلام، اپنی علمی و تحقیقاتی وراثت کے ساتھ ان دونوں شعبوں میں ایک نمایاں کردار ادا کر رہا ہے۔ اس مضمون میں ہم خلائی تحقیق کی تاریخ، کالونائزیشن کی اہمیت اور ان شعبوں میں عالم اسلام کے ممکنہ کردار پر روشنی ڈالیں گے۔

خلائی تحقیقات: ماورائی فضائی کھوج
خلائی ریسرچ میں بیرونی خلاء کا مطالعہ اور تحقیقات شامل ہیں اور دیگر سیاروں کی تحقیقات کرنا بشمول سیارے، چاند، ستارے اور کہکشاؤں جیسے آسمانی اجسام، اس میں شامل موضوعات جیسے کہ انسانوں کا خلا میں سفر کرنا اور وہاں وقت گزارنا، انسانی حیات کی تلاش، سیاروں کی تعداد کی تلاش اور انسانی موجودگی کی ممکنہ خوش زندگی کے مسائل۔ اس میں مختلف کوششوں کے بشمول روبوٹک مشن، انسان بردار خلائی پروازیں، خلائی دوربینیں اور خلاء میں کی جانے والی سائنسی تحقیق۔ خلائی تحقیق کے اہداف میں سائنسی علم کو آگے بڑھانا، کائنات کی ابتداء اور ارتقاء کو سمجھنا، ماورائے زمین زندگی کی تلاش اور خلائی سفر اور نوآبادیات کے لیے ٹیکنالوجیز تیار کرنا شامل ہیں۔

انسانی خلائی سفر کی تاریخ میں کچھ اہم سنگ میل ہیں۔ 1961ء میں یوری گاگارین پہلے انسان تھے جنہوں نے خلا میں سفر کیا۔ 1969ء میں اپولو 11 مشن کے ذریعے نیل آرمسٹرانگ اور بز ایلڈرن چاند پر اُترنے والے پہلے انسان بنے۔ بین الاقوامی خلائی اسٹیشن (ISS) یہ ایک مستقل آباد مقام ہے جہاں مختلف ممالک کے خلاباز مل کر کام کرتے ہیں اور طویل مدت تک خلا میں رہتے ہیں۔
معاصر دنیا میں کالونائزیشن

نوآبادیات سے مراد زمین سے باہر نئے خطوں یا آسمانی اجسام میں انسانی بستیاں یا رہائش گاہیں قائم کرنا ہے۔ اس میں انفراسٹرکچر، لائف سپورٹ سسٹمز اور پائیدار ماحولیاتی نظام کی ترقی شامل ہے تاکہ ماورائے زمین کے ماحول میں انسانی زندگی کو سہارا دیا جا سکے۔ اس میں شامل موضوعات شامل ہیں جیسے کہ دیگر سیاروں پر انسانی مُقِیمِینت کے بنیادی اقدامات، سیاروں پر زراعت، زندگی کی معیاریں اور انسانی حیات کی توسیع کے اقتصادی، ٹکنالوجی اور اخلاقی پہلوؤں کا جائزہ۔

نوآبادیات کے ممکنہ اہداف میں ہمارے نظام شمسی میں چاند، مریخ، کوسموس میں چھوٹے سےگول پتھر (asteroids) اور دیگر سیاروں کے چاند شامل ہیں۔ نوآبادیات کی کوششوں کا مقصد خلاء میں طویل مدتی انسانی رہائش کی فزیبلٹی کو تلاش کرنا، خود کو برقرار رکھنے والی کالونیوں کو تیار کرنا اور زمین سے باہر انسانیت کی موجودگی کو بڑھانا ہے۔
خلائی کالونائزیشن یا خلاء میں انسانی بستیاں بسانے کا خواب اب حقیقت بننے کے قریب ہے، جس میں اسلامی ممالک کے لیے مختلف مواقع اور چیلنجز موجود ہیں۔ خلائی پروگرامز میں شرکت سے اسلامی ممالک اپنے سائنسی اور تکنیکی معیار کو بلند کر سکتے ہیں۔ نیا علم اور ٹیکنالوجی مقامی صنعتوں میں بہتری لا سکتی ہے۔ خلائی کالونائزیشن کے خواب کو حقیقت میں بدلنے کے لیے اسلامی ممالک کو ان مواقع اور چیلنجز کا بغور جائزہ لینا چاہیے اور ایک جامع حکمت عملی بنانی چاہیے۔

خلاء میں وسائل کی تلاش اور ان کا استعمال، خلائی سیاحت اور دیگر خلائی کاروبار نئی اقتصادی راہیں کھول سکتے ہیں۔ خلائی تحقیق تعلیمی اداروں میں سائنس، ٹیکنالوجی، انجینئرنگ اور میتھیمیٹکس (STEM) کی تعلیم کو فروغ دے سکتی ہے۔ نوجوانوں میں تحقیق اور جدت کی حوصلہ افزائی کی جا سکتی ہے۔ تعلیمی اداروں میں خلائی سائنس کے پروگرامز کا آغاز کیا جائے اور نوجوانوں کو اس میدان میں مہارت حاصل کرنے کی ترغیب دی جائے۔ خلائی ریسرچ کی کوششیں انسانیت کے علمی،ٹیکنالوجی اور انسانیت کی تلاش کی توسیع کی طرف ایک قدم ہیں، جب کہ کالونائزیشن انسانی مُقیمینت کی توسیع کی دوسری مرحلہ ہے۔ دونوں موضوعات میں معمولاً خلاء، ماہ اور دیگر سیاروں کی مطالعات، سیاروں پر انسانی حیات کی تلاش اور انسانیت کے لئے نئے مقامات کی تلاش شامل ہوتی ہیں۔
خلائی تحقیق اور نوآبادیات کی کوششیں مختلف محرکات سے چلتی ہیں، جن میں سائنسی تجسس، تکنیکی ترقی، اقتصادی مواقع اور انسانیت کی طویل مدتی بقا کو یقینی بنانے کی خواہش شامل ہیں۔ وہ تکنیکی، لاجسٹک، ماحولیاتی اور اخلاقی تحفظات سمیت متعدد چیلنجز بھی پیش کرتے ہیں۔
خلائی تحقیق اور نوآبادیات میں

اہم اقدامات اور منصوبے
� ناسا NASA کا آرٹیمس (Artemis) پروگرام:جس کا مقصد انسانوں کو چاند پر واپس لانا اور 2020ء کی دہائی تک چاند کی پائیدار موجودگی قائم کرنا ہے، جس کا مقصد آخرکار مریخ پر خلابازوں کو بھیجنا ہے۔
� اسپیس ایکس کا اسٹار شپ پروگرام: ایک مکمل طور پر دوبارہ قابل استعمال خلائی جہاز تیار کرنا جو انسانوں کو مریخ اور نظام شمسی میں دیگر مقامات تک لے جانے کے قابل ہو، مریخ پر انسانی نوآبادیات کو فعال کرنے کے طویل مدتی ہدف کے ساتھ۔
� بین الاقوامی خلائی اسٹیشن (ISS): خلا میں سائنسی تحقیق، ٹیکنالوجی کی ترقی، اور بین الاقوامی تعاون کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر خدمات انجام دے رہا ہے، جبکہ طویل دورانیے کی خلائی پرواز اور لائف سپورٹ سسٹم کے بارے میں قیمتی بصیرت بھی فراہم کرتا ہے۔
� نجی خلائی منصوبے: بلیو اوریجن، ورجن گیلیکٹک، اور دیگر جیسی کمپنیاں بھی خلائی تحقیق اور نوآبادیاتی اقدامات پر کام کر رہی ہیں، بشمول ذیلی خلائی سیاحت، قمری مشن، اور کشودرگرہ کی کان کنی۔
خلائی تحقیق اور نوآبادیات ایسی جرأت مندانہ کوششوں کی نمائندگی کرتی ہیں جو کائنات میں انسانیت کی موجودگی کے مستقبل کو تشکیل دینے کی صلاحیت کے ساتھ انسانی علم، ٹیکنالوجی اور تخیل کی حدود کو آگے بڑھاتی ہیں۔
فلکیات اور اسلامی نقطۂ نظر

اسلامی نقطۂ نظر سے خلائی ریسرچ اور کالونائزیشن پر بحث میں مختلف علما اور فلاسفرز نے مختلف آراء پیش کی ہیں۔ خلا کی ریسرچ اور کالونائزیشن پر اسلامی نقطۂ نظر میں علم کی جستجو، انسانی بھلائی، اخلاقیات، اور قدرتی وسائل کا مناسب استعمال شامل ہیں۔ اگر یہ کام اسلامی تعلیمات اور اصولوں کے مطابق کیا جائے تو اسے جائز اور مستحسن سمجھا جا سکتا ہے۔ یہاں کچھ اہم نکات ہیں جو اسلامی تعلیمات کی روشنی میں بیان کیے جا سکتے ہیں۔

اسلام علم حاصل کرنے اور کائنات کے رازوں کو جاننے کی ترغیب دیتا ہے۔ قرآن میں بار بار انسان کو کائنات میں غور و فکر کرنے کی دعوت دی گئی ہے۔ اللہ ربّ العالمین قرآن کریم میں ارشاد فرماتے ہیں،’’کیا تم نہیں دیکھتے کہ اللہ نے آسمانوں اور زمین کی تخلیق کی ہے؟‘‘ (سورۃ ابراہیم: 19)
اسلام میں قدرتی وسائل کا استعمال اعتدال اور انسانیت کی بھلائی کے لیے ہونا چاہیے۔ خلاء کی کالونائزیشن اگر ان اصولوں کے تحت ہو، یعنی انسانیت کی بھلائی، ماحولیات کی حفاظت اور عدل و انصاف کے مطابق، تو اس میں کوئی مضائقہ نہیں۔ خلائی ریسرچ اور کالونائزیشن کے دوران اسلامی اخلاقیات کو مدّنظر رکھنا ضروری ہے۔
اسلامی فقہ کے مطابق، خلاء میں بھی نماز، روزہ اور دیگر عبادات کو انجام دینے کے اصول موجود ہیں۔ خلابازوں کے لیے شریعت کے مطابق عبادات کا طریقہ کار علماء نے بیان کیا ہے۔ اسلامی نظریات کے مطابق، قیامت کے دن کائنات کا خاتمہ ہوگا اور انسان کو اللہ کے سامنے حاضر ہونا ہوگا۔ اس تناظر میں خلاء کی تحقیق اور کالونائزیشن کو قیامت کے تناظر میں سمجھنا بھی ضروری ہے، کیونکہ آخرت پر ایمان اسلامی عقیدے کا بنیادی جزو ہے۔ اسلامی تعلیمات میں زمین کی حفاظت اور اس کی دیکھ بھال کی اہمیت پر زور دیا گیا ہے۔ خلاء کی کالونائزیشن کے ساتھ ساتھ زمین کی دیکھ بھال اور اس کے مسائل کو حل کرنا بھی ضروری ہے۔

قرآن و سنّت کی روشنی میں:۔
قرآن مجید میں براہ راست خلائی ریسر اور کالونائزیشن کا ذکر نہیں ملتا، مگر کئی آیات میں کائنات، زمین و آسمان اور اللہ کی نشانیوں پر غور و فکر کرنے کی ترغیب دی گئی ہے۔ یہ آیات مسلمانوں کو علم کی جستجو اور تحقیق کی طرف مائل کرتی ہیں، جو بالواسطہ طور پر خلائی ریسرچ اور کالونائزیشن کی حوصلہ افزائی کرتی ہیں۔ یہاں چند آیات پیش نظر ہیں:
آسمانوں اور زمین کی تخلیق میں غور و فکر کے سلسلہ میں اللّٰہ تعالیٰ فرماتے ہیں۔ ’’بیشک آسمانوں اور زمین کی تخلیق میں، اور رات دن کے باری باری آنے میں ان عقل والوں کے لیے نشانیاں ہیں۔‘‘ (سورۃ آل عمران: 190) کائنات میں اللہ کی نشانیوں کی تلاش کے ضمن میں یہ آیت نظر آتی ہے۔ ’’عنقریب ہم ان کو اپنی نشانیاں آفاق میں بھی دکھائیں گے اور ان کے اپنے نفس میں بھی، یہاں تک کہ ان پر ظاہر ہو جائے گا کہ وہ حق ہے۔‘‘ (سورۃ فصلت: 53)زمین و آسمان کی تسخیر کے متعلق فرمان خداوندی ہے کہ ’’کیا تم نہیں دیکھتے کہ اللہ نے آسمانوں اور زمین کی ہر چیز تمہارے لئے مسخر کر دی ہے اور تمہیں اپنی کھلی اور چھپی نعمتیں بھرپور دے رکھی ہیں؟‘‘ (سورۃ لقمان: 20) آسمانوں اور زمین کی تسخیر کے اذن کے بارے میں قرآن کہتا ہے،’’اے گروہ جن و انس! اگر تم آسمانوں اور زمین کے کناروں سے باہر نکل سکتے ہو تو نکل جاؤ، تم نہیں نکل سکتے مگر زور کے ساتھ۔‘‘(سورۃ الرحمن: 33)

یہ آیات انسان کو کائنات کے اسرار پر غور و فکر کرنے اور علم حاصل کرنے کی ترغیب دیتی ہیں۔ اگرچہ یہ آیات خلائی ریسرچ اور کالونائزیشن کے بارے میں براہ راست نہیں ہیں، لیکن ان میں موجود ترغیب اور حوصلہ افزائی علمی تحقیق اور کائنات کی تسخیر کے ضمن میں سمجھی جا سکتی ہے۔ اسلامی نقطۂ نظر سے علم کی جستجو اور کائنات کے رازوں کو جاننا ایک اہم عمل ہے، جو خلائی ریسرچ کی بنیاد فراہم کرتا ہے۔اس ضمن میں کئی احادیث موجود ہیں جو بالواسطہ طور پر خلائی تحقیق کی حوصلہ افزائی کرتی ہیں۔ یہاں چند اہم احادیث پیش کی جاتی ہیں جو علم کی جستجو اور تحقیق کی اہمیت کو اُجاگر کرتی ہیں۔(جاری)
رابطہ۔09422724040
[email protected]