حیدرآبادمیں کورونا کے بڑھتے معاملات | حلیم بنانے والوں کا رمضان میں کاروبار محدودکرنے کا منصوبہ

حیدرآباد// حیدرآباد میں کوویڈ 19کے بڑھتے ہوئے معاملات کے مدنظر حلیم بنانے والوں نے رمضان میں اپنے کاروبار کو محدودکرنے کا منصوبہ بنایا ہے ۔عام طورپر تقریبا دو ہزار مسلمہ رسٹورنٹس رمضان کے دوران حلیم فروخت کرتے ہیں جو کئی کروڑ روپئے کا کاروبار ہے ۔اس لذیذ غذا کی وجہ سے کئی لوگوں کو عارضی روزگار بھی ملتا ہے ۔اس مرتبہ رسٹورنٹس میں حلیم کے عارضی کاونٹرس قائم نہ کرنے کا فیصلہ کیاگیا۔حلیم بنانے والوں کو کوویڈ19کی وجہ سے بڑی آئی ٹی کمپنیوں کے بند ہونے سے جھٹکالگاہے ۔کئی آئی ٹی کمپنیاں ہر سال مشہور حلیم ساز اداروں کو آرڈرس دیتی ہیں لیکن چونکہ کئی آئی ٹی کمپنیاں اب بھی ورک فرم ہوم طریقہ کار پر عمل کررہی ہیں،آئی ٹی شعبہ سے طلب میں کمی آئی ہے ۔پچھلے سال بھی رسٹورنٹس نے پورے ملک میں لاک ڈاون کی وجہ سے یہ ایرانی ڈش نہیں بنائی تھی۔رسٹورنٹس کے مالکین نے بتایا کہ جاریہ سال پیکنگ کیلئے استعمال ہونے والے پلاسٹک کے ڈبوں کی قیمت بھی بڑھ گئی ہے ۔یواین آئی