حکومت کی میڈیا پالیسی غیر جمہوری

 سرینگر//جموں وکشمیرنیوز پیپرس کارڈی نیشن کمیٹی  نے انتظا میہ کے اس تازہ ترین حکمنامے جس میں محکمہ اطلاعات و تعلقات عامہ نے کئی اخبارات کو سرکاری اشتہارات روکنے پر زبردست برہمی کا اظہار کیا ۔ اجلاس میں شامل شر کاء نے کہا کہ حکومت کی میڈیا مخالف پا لیسی  غیرجمہوری اور آزادی اظہار رائے پر براہ راست حملہ ہے جو کسی بھی صورت میں قابل قبول نہیں ہے۔ اجلاس میں پریس کی آزادی کے خلاف حکومتی اقدامات کو ڈٹ کر مقابلہ کرنے کے لئے متفقہ طور پر فیصلہ لیاگیا۔ اجلاس میں شامل تمام انجمنوں کے نمائندوں نے زور دیا کہ ان تمام غیر جمہور ی فیصلوں کو واپس لیا جائے۔ اجلاس میں کہا گیا کہ گزشتہ کئی دہائیوں سے نامساعد حالات کے باوجود یہاں کے صحافیوں نے کٹھن حالات میں بھی اپنی صحافتی ذمہ داریاں انجام دیںبلکہ کئی صحافیوں کو حالات و واقعات کی ترجمانی کی پاداش میں زندگیوں سے ہاتھ دھونا پڑا۔ اجلاس میں اخبار ما لکان کو صلاح دی گئی کہ وہ اخباری مواد کے معیار میں بہتر ی لانے کے ساتھ ساتھ دیگر تکنیکی معاملات اوراخبارات کی تقسیم کاری میں درستی لائیں۔ بعدمیں جوائنٹ ڈائریکٹر انفارمیشن کشمیر کو اس ضمن میں Representation روانہ کی گئی جس میں ان سے اپیل کی گئی کہ وہ ان فیصلوں پر نظر ثا نی کر کے سرکاری اشتہارات بحا ل کرنے سے متعلق فوری اقدامات کریں۔ کمیٹی نے یہ فیصلہ لیا کہ وہ اس معاملہ کوجموںکشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر اور پریس کو نسل آ ف انڈ یا کی نوٹس میں بھی لائیں گے۔ میٹنگ کے آ خر پر ایک تعز یتی اجلاس میںبزرگ صحافی اورروزنامہ’ وادی کی آواز‘کے بانی ومدیر اعلیٰ غلا م نبی شیداکے انتقال پر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے ان کی وفات کو کشمیرکی صحافت کیلئے ایک بڑا نقصان قرار دیاگیا ۔اجلاس میں گذ شتہ سا ل فوت ہوئے صحا فیوں کو بھی خرا ج عقید ت پیش کیا گیا۔