حکومت ملی تو پبلک سیفٹی ایکٹ ہٹائوں گا: عمر عبد اللہ

سرینگر/سابق وزیر اعلیٰ عمر عبد اللہ نے جمعرات کو وعدہ کیا کہ اگر اُن کی پارٹی اقتدار میں آگئی تو متنازع پبلک سیفٹی ایکٹ کو ہٹایا جائے گا۔

عمر نے پارٹی کارکنان سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا''میں آپ کو اور جموں کشمیر کے جملہ عوام کو یقین دلاتا ہوں کہ اگر ہماری پارٹی بر سر اقتدار آئی تو ابتدائی ایام میں ہی پبلک سیفٹی ایکٹ کو ختم کروں گا۔میں آپ سے کہتا ہوں کہ اس قانون کو کاغذات سے ہمیشہ ہمیشہ کیلئے نکال باہر کروں گا''۔

عمر عبد اللہ جنوبی کشمیر کے پلوامہ میں پارٹی تقریب کے دوران اظہار خیال کررہے تھے ۔

انہوں نے کہا کہ ریاست کو ماضی قریب میں کئی ''اپاہج'' مخلوط سرکاریںملی ہیں۔

 عمر نے کہا''ہم نے کئی اپاہج مخلوط سرکاریں دیکھیں جہاں ہم دوسروں کے رحم و کرم پر تھے ۔مرحوم مفتی محمد سعید وزیر اعلیٰ بنے ،غلام نبی آزاد کی مدد سے اور آزاد وزیر اعلیٰ بنے   مفتی کی مدد سے۔میں خود وزیر اعلیٰ رہا کانگریس کی مدد سے''۔

عمر نے ایک پارٹی کی سرکار کی اہمیت اُجاگر کرتے ہوئے کہا''اسی لئے میں چاہتا ہوں ہمیں سرکار بناتے وقت کسی کی حمایت کی ضرورت نہ پڑے تاکہ ہم چیزوں کو ٹھیک کرسکیں۔''

انہوں نے کہا کہ افسپا جیسے قوانین ہٹانے کیلئے ہمیں مرکز کے ماتحت رہنا پڑتا ہے لیکن مقامی قوانین کو بدلنے کیلئے ہمیں ہی سب کچھ کرنا ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کشمیری نوجوانوں کو پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت گرفتار نہیں کیا جانا چاہئے جس کی وجہ سے اُن کے والدین کو بھی مشکلات اور مصائب کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔