حقوق کی بحالی کیلئے حق خود ارادیت لازمی:انجینئر رشید

 سرینگر//آزاد رکن اسمبلی انجینئر رشید نے ریاست میں انسانی حقوق کی بحالی کیلئے لائن آف کنٹرول کے آرپار حق خودارادیت کو لازمی قرار دیا ۔انہوں نے کہا”نئی دلی جموں کشمیر میں جوں کی توں صورتحال بر قرار رکھنے کیلئے یہاں کی صورتحال کو صحیح پیش نہیں کررہا ہے اور یوں عالمی برادری کو دھوکے میں رکھا جارہا ہے“۔انسانی حقوق کے عالمی دن پر راج باغ میں گرفتاری سے قبل انجینئر رشید نے میڈیا کو بتایا ” نئی دلی نے کشمیری قیادت کے ساتھ وعدوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کو حل کرنے کے بجائے قائدین کی وفاداریاں خریدنے کی کوشش کی جس کی وجہ سے گذشتہ ستر برسوں سے جموں کشمیر میں اُس کی سبھی پالیسیاں ناکام ثابت ہوئی ہیں“۔انہوں نے کہا”عالمی سطح پر انسانی حقوق کی خاطر سرگرم تنظیموں کے نمائندوں کو جموں کشمیر کا دورہ کرنے کی اجازت دی جانی چاہئے تاکہ سچ دنیا کے سامنے آسکے“۔انہوں نے مزید کہا کہ گذشتہ تیس سال کے دوران ہزاروں افراد کی حراستی گمشدگی ہوئی ہے،سینکڑوں کو اندھا کردیا گیا ہے اور سینکڑوں کو فرضی جھڑپوں میں مار ڈالا گیا لیکن نئی دلی نے کشمیریوں کو معمولی سطح کا بھی انصاف فراہم نہیں کیا لہٰذا ان جرائم میں ملوث افراد کو نہ ہی بے نقاب کیا گیا ہے اور نہ کوئی ادارہ مظلوموں کو انصاف دلا سکا“۔