حقوق جنگلات ایکٹ2006 کی عمل آوری

 سرینگر//محکمہ جنگلات نے ضلعی افسران ،ڈپٹی کمشنروں ،صوبائی فارسٹ افسروں اور ڈسٹرکٹ پنچایت افسروں کے تربیتی پروگرام کا اِنعقاد کیا جس میں فارسٹ رائٹس ایکٹ 2006 کی عمل آوری کے بارے میں تربیت دی گئی۔قومی شہرت کے وسائل پر مشتمل اَفراد جن میں  مرکزی جوائنٹ سیکریٹری وزارتِ قبائلی اَمور ، ڈاکٹر اے کے جاہ ، سابق کمشنر قبائلی ریسرچ اینڈ ٹریننگ اِنسٹی چیوٹ مہاراشٹر شامل ہیں، نے جموںوکشمیر میں فارسٹ رائٹس ایکٹ 2006 کی عمل آوری میں شامل طریقۂ کار اور عمل کے بارے میں شرکاء کو مفید معلومات فراہم کیں۔تربیتی پروگرام میں ضلعی سطح ، سب ڈویژن سطح اور گرام سبھا سطح کمیٹیوں کے ایکٹ اور اِس کے تحت بنائے گئے قواعد کے مطابق فرائض انجام دینے پر توجہ مرکوز کی گئی ۔واضح رہے کہ اِس ایکٹ کی عمل آوری میں جنگلات کے رہائشی شیڈول قبائل اور دیگر روایتی جنگل آبادی میں فارسٹ رائٹس شامل ہیں جن کے حقوق درج نہیں ہوسکے ۔یہ ایکٹ حقوق کی ریکارڈنگ کے لئے ایک فریم ورک مہیا کرتا ہے تاکہ اِس طرح کی پہچان اور جنگل اراضی کے سلسلے میں نشان دہندگی کے لئے مطلوبہ شواہد کی نوعیت موجود ہو۔حقوق کی ریکارڈنگ کے فریم ورک میں طریقۂ کار اور عمل شامل ہیںجس کا اِطلاق ایف اے اے 2006 کے سیکشن 4 کے مطابق گرام سبھا ، سب ڈویژن سطح اور ضلعی سطح کی کمیٹیوں کے ذریعے کیا جانا چاہیئے ۔ضروری شواہد کی نوعیت کو قواعد میں تفصیل سے درج کیا گیا ہے اور فارسٹ رائٹس کمیٹی کے ذریعہ فیلڈ تصدیق بھی شامل ہے جس میں گرام سبھا کے ذریعے اپنے ممبروں میں منتخب ہونے کے لئے 10سے 15 ممبران شامل ہیں۔حکومت نے پہلے ہی چیف سیکرٹری کی سربراہی میںیوٹی لیول نگرانی کمیٹی ،ضلع ترقیاتی کمشنر کی سربراہی میں ڈسٹرکٹ لیول کمیٹی ،سب ڈویژنل مجسٹریٹ کی سربراہی میں سب ڈویژنل لیول کمیٹی کی منظوری دی ہے اور محکمہ جنگلات ، قبائلی امور اور محکمہ دیہی ترقیاتی اَفسران کے علاوہ غیر سرکاری ممبران جو ضلعی اور سب ڈویژنل سطح کی سطح پر ضلع پنچایت کے ذریرے نامزد ہوتے ہیں۔پرنسپل چیف کنزرویٹر فارسٹس ( ایچ او ایف ایف) ڈاکٹر موہت گیر نے جموںوکشمیر میں فارسٹ رائٹس ایکٹ کی عمل آوری کی صورتحال کا مفصل بیان پیش کیا۔انہوں نے کہاکہ راجوری ، پونچھ ، بڈگام اور کپواڑہ جیسے کچھ اضلاع میں اب تک زیادہ سے زیادہ دعوے موصول ہوئے ہیں جو تصدیق کے مختلف مراحل میں ہیں۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ محکمہ جنگلات نے ایک بیداری ویڈیو اور پرچے بھی تیار کئے ہیں جس میں ایف آر اے 2006 کے مختلف دفعات کی وضاحت کی گئی ہے۔اِس موقعہ پر سیکرٹری قبائلی اَمور ڈاکٹر شاہد اقبال چودھری نے کہا کہ ایف آر اے 2006 جنگل بستی کے نظام الاوقات اور دیگر روایتی جنگل مکینوں کی معاشیات میں تبدیلی لائے گا اور کیپکس کے تحت فنڈس کو بروئے کار لا کر کمیونٹی انفراسٹرکچر کی تعمیرمیں مدد فراہم کرے گا۔مرکزی جوائنٹ سیکرٹری نے ایف آر اے 2006 کی تاریخ ، ایکٹ کی کلیدی دفعات پر تفصیلی روشنی ڈالی اور جموں وکشمیر میں اس کے نفاذ کے تفصیلی تناظر میں تبادلہ خیال کیا۔اُنہوں نے اِنفرادی اور برادری حقوق کو وسیع پیمانے پر پیش کرنے کے علاوہ جنگل حقو ق ایکٹ 2006 کے ارتقاء کا ایک مختصر پس منظر پیش کیا۔ڈاکٹر اے کے جہا نے انفرادی کے ساتھ ساتھ کمیونٹی فارسٹ رائٹس کے زمرے میں فطرت اور حقوق کی حد کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے یہ بھی خبردار کیا کہ کمیٹیاں دعوے کی اہلیت کی بنیاد پر معاملات کا فیصلہ کریں۔ انہوں نے مہاراشٹر میں استعمال ہونے والے ’جیو انفارمیٹکس‘ کی مدد سے پروفورما پر مبنی نظام کی بھی وضاحت کی جس نے سب ڈویژنل سطح کمیٹی اور ضلعی سطح کمیٹی کے ذریعے درست فیصلہ کرنے تک پہنچنے میں زبردست مدد کی۔ڈسٹرکٹ لیو ل ٹریننگ میں یوٹی کے 58مختلف مقامات کے لگ بھگ 80 اَفسران نے شرکت کی۔